روس اور یوکرین

روس سے بَخموت میں ٹھکانوں کورمضان قدیروف کی فورسزکے سپردکرنے کا مطالبہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

روس کے نیم فوجی گروپ ویگنرکے سربراہ نے یوکرین کے جنگ زدہ شہربَخموت میں ٹھکانوں کو چیچن رہنما رمضان قدیروف کی فورسزکے حوالے کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔

روسی وزیردفاع سرگئی شوئیگو کولکھے گئےایک خط میں ییفگنی پریگوژن نے کہاکہ’’میں آپ سے درخواست کرتاہوں کہ 10 مئی کی نصف شب سے پہلے بخموت اوراس کے مضافات میں نیم فوجی دستوں ویگنر کے ٹھکانوں کو اخمت بٹالین کے یونٹوں کو منتقل کردیں اور اس مقصد کے لیے ایک جنگی حکم نامہ جاری کریں‘‘۔

اخمت بٹالین سے مرادچیچن لڑاکا یونٹ ہیں جو طاقتور قدیروف کی کمان میں ہیں۔وہ گذشتہ ڈیڑھ دہائی سے روس کی مسلم اکثریتی جمہوریہ چیچنیا کے طاقتورحکمران ہیں۔

پریگوژن نے کہا کہ ان کے جنگجوؤں کو’’گولہ بارود کی قلّت" کی وجہ سے وہاں سے نکلنے پر مجبور ہونا پڑے گا‘‘۔انھوں نے روسی وزارت دفاع پر الزام عاید کیا کہ وہ اکتوبر 2022 سے اب تک مطلوبہ گولہ بارود کا صرف 32 فی صدمہیّاکررہی ہے۔

ویگنرجنگجوبَخموت کی لڑائی میں ہراول دستے کاکردار کررہے ہیں۔اس دوران میں پریگوژن کے جنگجوؤں اور روسی فوج کے مابین مخاصمت کھل کرسامنے آ گئی ہے۔

ویگنر کے سربراہ نے شوئیگو اورچیف آف جنرل اسٹاف ویلری گیراسیموف کی تنقیدپرمبنی ویڈیوز کے سلسلے سے دستبرداری کی دھمکی بھی دی ہے۔

قبل ازیں رمضان قدیروف نے جمعہ کے روزٹیلی گرام پرکہاتھاکہ ان کے جنگجو’’شہرمیں پیش قدمی اور قبضہ کرنے کے لیے تیار ہیں‘‘۔انھوں نے ویگنر یونٹوں کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ دونوں گروہ پوپاسنا، سیورودونیتسک اور لیسیچنسک کی "سب سے مشکل" لڑائیوں میں شانہ بشانہ رہے ہیں۔

اس سے قبل ایک پیغام میں، پریگوژن نے قدیروف کی پیش کش پر ان کا شکریہ ادا کیا اور کہا کہ چیچن افواج "اس میں کوئی شک نہیں" کہ بَخموت پر قبضہ کرلیں گی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں