مصر: نوجوان اور اس کی منگیتردریائے نیل میں ڈوب کر ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

مصرمیں ایک نوجوان اپنی منگیترکو ڈوبنے سے بچانے کی کوشش کے دوران خود بھی دریا برد ہوگیا۔ امدادی کارکنوں نے دریائے نیل میں ڈوبنے والے جوڑے کی لاشیں نکال لی ہیں۔ یہ واقعہ ایک کشتی سے لڑکی کا پاؤں پھسلنے سے پیش آیا۔

کل اتوارکو شمالی مصر میں دقہلیہ گورنری میں ریور ریسکیو فورسز نے ایک نوجوان اور اس کی منگیتر کی لاشیں برآمد کیں جو دریائے نیل کے پانی میں ڈوب گئے تھے۔ ان کے ساتھ یہ حادثہ اس وقت پیش آیا جب وہ منگنی کی تقریب کے انعقاد کے لیے ایک ہال بک کرانے کے لیے جا رہے تھے۔

لڑکی کو بچاتے نوجوان بھی ڈوب گیا

ایک نوجوان اور لڑکی دریائے نیل کے پانی میں اس وقت ڈوب گئے جب وہ شادی ہال ریزرو کرنے جا رہے تھے جس میں انہوں نے اپنی منگنی کی تقریب منعقد کرنے کا فیصلہ کیا تھا۔ وہ کشتی پر سوار ہوئے، اس دوران لڑکی کا پاؤں پھسل گیا اور وہ دریا میں ڈوب گئی۔ لڑکے نے اسے بچانے کے لیے اس کے پیچھے چھلانگ لگا دی لیکن وہ لڑکی کو بچانے کے بجائے خود بھی ڈوب گیا۔

واقعے کے فوری بعد منصورہ فرسٹ پولیس ڈیپارٹمنٹ کے انویسٹی گیشن یونٹ اور ریور ریسکیو فورسز کے افسران جائے وقوعہ پر پہنچے۔

جانچ اور تفتیش سے منصورہ شہر میں دریائے نیل کے پانی میں ڈوبنے والے دو افراد کی پراسرار حالت میں موت کا انکشاف ہوا ہے۔

دونوں لاشیں منصورہ کے انٹرنیشنل ہسپتال کے مردہ خانے منتقل کر دی گئیں اور واقعے کی ضروری رپورٹ جاری کر دی گئی۔ فوت ہونے والے لڑکے کی عمر 21 سال تھی اوراس کی شناخت عبداللہ عبدالمنعم حسن ندا کے نام سے کی گئی ہے جب کہ لڑکی کی عمر 18 سال اور اس کی شناخت سہیر کے نام سے کی گئی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں