سعودی عرب:منشیات رکھنے اور استعمال پر18 افراد کومجموعی طور پر80 سال قید کی سزا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

سعودی عرب کے ساحلی شہر جدہ میں ایک عدالت نے 17 سعودی شہریوں اورایک شامی باشندے کو مختلف قسم کی منشیات کے استعمال اور انھیں رکھنے کے جُرم میں مجموعی طورپر 80 سال قید کی سزائیں سنائی ہیں۔

ایک اخباری رپورٹ کے مطابق فوجداری عدالت نے اس گروپ کو کوکین، ہیش اورکرسٹل میتھ رکھنے اور استعمال کرنے کےجُرم میں قید کاحکم دیا ہے۔اس گروپ نے ایک کیبن کو ملاقات کی جگہ مقررکررکھا تھا اوروہیں نشہ آور اشیاء استعمال کرتے تھے۔

سعودی اخبارعکاظ نے ذرائع کے حوالے سے بتایا ہے کہ سزاپانے والے ان 18 مجرموں میں کاروباری مردو خواتین اورمارکیٹنگ ڈائریکٹروں کے علاوہ نرسنگ اور فارمیسی کی تعلیم حاصل کرنے والے یونیورسٹی کے طلبہ بھی شامل ہیں۔

عدالت نے مجرموں پر سفری پابندی بھی عاید کی ہے اورانھیں مختلف مدت کی قید کی سزائیں سنائی ہیں جن کی مجموعی مدت 80 سال بنتی ہے۔اخبار نے یہ بھی کہا کہ عدالت نے منشیات کے ان مختلف مقدمات کی ورچوئل اورملزموں کی اصالتاً حاضری میں سماعت کی ہے اوراحکامات جاری کیے ہیں۔مزید بتایاگیا ہے کہ اپیل کورٹ نے مجرموں کے اعتراض کے بعد ان فیصلوں کی توثیق کی تھی۔

اپنی رپورٹ میں عکاظ نے کہا کہ سعودی قانون منشیات کے مجرموں کو دی جانے والی سزاؤں کے درمیان فرق کرتا ہے اور وہ یہ دیکھتاہے کہ آیا وہ اسمگلر، ڈیلر یا منشیات کا استعمال کرنے والے ہیں۔سعودی عرب میں منشیات کی اسمگلنگ کو روکنے لیے لیے طویل عرصے سے کریک ڈاؤن کارروائیاں کررہا ہے اورخطرناک منشیات کی اسمگلنگ میں ملوّث مجرموں کے سربھی قلم کردیے جاتے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں