سعودی عرب میں سائبر سکیورٹی اور آئی ٹی کی ملازمتیں بڑھ رہی ہیں: رپورٹ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی عرب میں روزگار کے مواقع کئی شعبوں میں مسلسل بڑھ رہے ہیں۔ خاص طور پر ’’ویژن 2030 ‘‘ کے منصوبوں جیسے کہ نیوم اور ’’دا ریڈ سی‘‘ کی وجہ سے روزگار کے مواقع میں تیزی سے اضافہ ہوا ہے۔

ایک DDoS تخفیف کی خدمت فراہم کرنے والی کمپنی Qrator Labs مسلسل نیٹ ورک کی دستیابی اور نیٹ ورک سیکیورٹی خدمات پیش کرتی ہے نے اپنی ایک حالیہ رپورٹ میں بتایا ہے کہ مملکت میں سائبرسیکیوریٹی اور انفارمیشن ٹیکنالوجی کے شعبوں میں پچھلے پانچ سالوں میں ملازمتوں میں تیزی سے اضافہ ہوا ہے۔ سعودی عرب میں ٹیکنالوجی سے متعلق روزگار کی مارکیٹ آنے والے دنوں میں مزید پھیلے گی۔

رپورٹ 2023 کے لیے سعودی عرب کی انفارمیشن اینڈ کمیونیکیشن ٹیکنالوجی (آئی سی ٹی) کی حکمت عملی اس شعبے میں 25 ہزار سے زیادہ ملازمتیں پیدا کرنے، آئی ٹی انڈسٹری اور ابھرتی ہوئی ٹیکنالوجیز کے حجم میں 50 فیصد اضافے اور مجموعی جی ڈی پی میں اس شعبے کے شراکت کو 13.3 بلین ڈالر تک بڑھانے کی پیشکش کر رہی ہے۔ رپورٹ میں بتایا گیا کہ نیٹ ورک انجینئرز اور سائبرسکیوریٹی تجزیہ کاروں کی طلب خاص طور پر زیادہ ہے۔

مائیکروسافٹ سرٹیفائیڈ سسٹم انجینئر (MCSE) کی پوزیشن نے سعودی عرب میں گوگل سرچز میں 100 فیصد ترقی کی شرح دیکھی ہے۔ اسی طرح رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ سائبر سیکیورٹی کے کام سے متعلق سرچز میں گزشتہ سال کے مقابلے میں 353 فیصد اضافہ ہوا ہے۔

رپورٹ میں ٹیکنالوجی کے شعبے کی تیز رفتار ترقی کی وجہ مختلف حکومتی اقدامات اور دیگر صنعتوں کے فروغ کو قرار دیا گیا ہے۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ ترقی بنیادی طور پر حکومت، ٹیلی کام، فنانس اور تیل اور گیس کے شعبوں میں ڈیجیٹل تبدیلی کی کوششوں سے ہو رہی ہے۔ منصوبوں میں گیگا پراجیکٹس، سمارٹ سٹیز اور ای گورننس پر زیادہ توجہ دی گئی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں