تونس: دہشت گردی کی تعریف کرنے کے الزام میں راشد الغنوشی کو ایک سال قید

النہضہ موومنٹ کے سربراہ کو دہشت گردی کی تعریف کرنے، سکیورٹی فورسز کے خلاف اکسانے اور ریاستی اداروں کی توہین کرنے پر سزا دی گئی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

پیر کو تونس کی ایک عدالت نے النہضہ موومنٹ کے رہنما راشد الغنوشی کو دہشت گردی کی تعریف کرنے، سکیورٹی فورسز کے خلاف اکسانے اور ریاستی اداروں کی توہین کرنے کے الزام میں ایک سال قید کی سزا سنائی۔

تونس کی کورٹ آف فرسٹ انسٹینس میں دہشت گردی کے مقدمات کی جانچ سے متعلق پیری فیرل سرکٹ نے الغنوشی کو ایک سال قید اور 1000 دینار جرمانے کا حکم دیا۔ الغنوشی کے خلاف ایک سکیورٹی یونین کی طرف سے بھی مقدمہ کیا گیا اور موقف اختیار کیا گیا کہ النہضہ کے رہنما نے سکیورٹی فورسز کے خلاف بیان دیا تھا۔ اس بیان میں الغنوشی نےفورسز کو ظالم قرار دیا تھا۔

واضح رہے راشد الغنوشی کو فروری میں اس وقت حراست میں لیا گیا جب الغنوشی نے "النہضہ" تحریک میں شوریٰ کونسل کی رکن فرحت لبار کی تعظیم کے دوران سیکورٹی فورسز کو بیان کرنے کے لیے "ظالم" کا لفظ استعمال کیا۔

اس وقت الغنوشی نے کہا کہ وہ "کسی حکمران یا ظالم سے نہیں ڈرتے" ۔ ان بیانات کے بعد ان پر بڑے پیمانے پر تنقید کی گئی تھی۔

الغنوشی کو اس معاملے میں جیل کی سزا سنائی گئی تھی۔ یہ سزا اس کے باوجود تھی کہ انہوں نے مقدمے کی سماعتوں میں شرکت سے انکار کیا تھا۔

تقریباً 3 ہفتے قبل حکام نے النہضہ موومنٹ کے رہنما راشد الغنوشی کو ایک بیان کے پس منظر میں گرفتار کرلیا تھا۔ اس بیان میں انہوں نے تونس میں خانہ جنگی اور افراتفری پھیلانے کی دھمکی دی تھی۔

ہفتہ قبل الغنوشی کے خلاف منی لانڈرنگ اور ریاستی سلامتی پر حملہ کرنے کے الزامات کے تحت ایک اور کیس بنا دیا گیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں