20 ایف سولہ طیاروں کی لاگت دو ارب ڈالر، یوکرین کے امریکہ سے بڑے مطالبے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

یوکرین کے عزائم بلاشبہ عظیم ہیں تاہم یہ کیف کی امیدیں اس قدر توانا ہوتی جارہی ہیں کہ وہ اب اپنے سب سے بڑی اتحادی امریکہ کی صلاحیتوں سے بھی ماورا ہوتی جارہی ہیں۔

جرمن خبر رساں ادارے ڈی پی اے کے مطابق یوکرین کی وزارت دفاع نے ملک کو روسیوں سے آزاد کرانے میں مدد کے لیے 48 امریکی ایف سولہ لڑاکا طیاروں کی امید ظاہر کردی۔

یوکرینی وزارت کے خیال میں 48 ایف سولہ طیاروں کے 4 سکواڈرن ہونے چاہیں تاکہ اپنے ملک کو حملہ آوروں سے آزاد کرایا جا سکے تاہم یوکرین کی یہ نئی امیدیں اس قدر مہنگی ہیں کہ ان کو پورا کرنے میں 5 بلین امریکی ڈالر خرچ کرنا پڑ سکتے ہیں۔

یہی بات امریکی جوائنٹ چیفس آف سٹاف کے چیئرمین مارک ملی نے گزشتہ روز اس وقت کی تھی جب انہوں نے کہا تھا کہ 10 عدد ایف سولہ طیاروں کی قیمت ایک ارب ڈالر ہے۔ اب 48 طیاروں کی قیمت لگ بھگ 5 ارب ڈالر ہے اور پینٹاگون اس وقت اس قدر بڑی رقم خرچ کرنے کو تیار نظر نہیں آرہا۔

یوکرین کی زمینی حقائق سے تجاوز کرتی خواہشات نے ہی مارک ملی کو یہ کہنے پر مجبور کردیا کہ "اگر طیارے ابھی بھیجے جاتے ہیں تو یہ ان دیگر صلاحیتوں کی مالی اعانت کی قیمت پر ہو گا جنہوں نے یوکرین کو ترقی دی ہے‘‘ ۔ اس بیان سے اشارہ یوکرین کو فراہم کردہ جدید میزائل دفاعی نظام کی طرف تھا۔

انہوں نے زور دیا کہ یہ جدید لڑاکا طیارے کوئی ایسا خفیہ ہتھیار نہیں ہوں گے جو توازن کو بگاڑ دیں گے جیسا کہ یوکرین اس کا تصور کرتا ہے۔

ایسا قدم اٹھانے کے لیے شاید واشنگٹن کے جوش کو کم کرنے والی چیز یہ بھی ہے امریکہ اب تک روس سے لڑنے کے لیے یوکرینی افواج پر اربوں ڈالر کی فوجی امداد بہا چکا ہے۔ یاد رہے گزشتہ ہفتے امریکہ نے اپنے اتحادیوں کو یوکرین کو ایف سولہ طیاروں کے حوالے سے اقدامات کرنے کا گرین سگنل دیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں