ایف سولہ لڑاکا طیارے نے امریکہ میں ایک گھنٹے تک خوف طاری کیے رکھا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

امریکہ نے اتوار کے روز ایک گھنٹہ حقیقی اور پراسرار دہشت گردی کے خوف میں زندگی گزاردی کیونکہ ایک چھوٹے طیارے کے کپتان نے ایئرپورٹ سے اڑان بھرنے کے بعد مقامی حکام کی کالوں کا جواب نہیں دیا تھا۔ یہ ایک سیسنا سائٹیشن ماڈل کا طیارہ تھا جو عام طور پر تاجروں کے لیے مخصوص ہوتا ہے۔

ریاست ٹینیسی میں چھوٹے طیارے نے الزبتھٹن سٹی کے ایئرپورٹ پر سے رونکونکوما کی طرف طیارے کی طرف اڑان بھری تھی۔ رابطہ نہ ہونے کے بعد ایک عجیب اور طویل خاموشی چھا گئی جس کے جواب میں نارتھ امریکن ایرو سپیس ڈیفنس کمانڈ یا NORAD نے فوری طور پر اس کا پیچھا کرنے کے لیے ایف سولہ لڑاکا طیارے کو اڑان بھرنے کا حکم دے دیا۔

جنگی پائلٹ اس رفتار سے روانہ ہوا جس نے ساؤنڈ بیریئر کو توڑ دیا۔ ایک دھماکہ ہوا جس کی گونج پورے واشنگٹن ڈی سی میں سنائی دی ۔ اس آواز سے حقیقی دہشت گردی کا خوف مزید بڑھ گیا۔ ایف سولہ چھوٹے طیارے کے قریب پہنچا تو اس نے اس پائلٹ سے رابطہ کیا۔ اس پائلٹ نے جواب نہیں دیا۔

پھر ایف سولہ نے اپنی توجہ مبذول کرنے کے لیے شعلوں کا استعمال کیا لیکن اس کی یہ کوشش بھی ناکام ہوگئی۔ یہاں تک کہ وہ 9 ہزار میٹر فی منٹ کی رفتار سے نیچے کی طرف بڑھتے ہوئے طیارے سے حیران رہ گیا، اور ورجینیا میں "جارج واشنگٹن نیشنل فاریسٹ" کے قریب ایک کم آبادی والے پہاڑی علاقے میں گر کر تباہ ہوگیا۔

امریکی صدر بائیڈن اس وقت اپنے بھائی کے ساتھ میری لینڈ کے ایک فوجی اڈے پر گولف کھیل رہے تھے۔ انہیں حادثے کے بارے میں بتایا گیا کہ جس سے ان کی نقل و حرکت پر کوئی اثر نہیں پڑا۔ سروس کے ترجمان انتھونی گگلیلمی نے میلبورن کے اینکور موٹرز پر ہونے والے حادثے کے بارے میں صحافیوں کو بتایا۔

تحقیقات سے واقف ذرائع کے مطابق طیارے میں 4 افراد سوار تھے۔ طیارہ اپنی مقررہ منزل سے 500 کلومیٹر سے زیادہ آگے بڑھ گیا تھا۔ جس جگہ طیارہ گر کر تباہ ہوا وہاں کوئی مشکوک چیز نہیں ملی۔ طیارے پر سوار افراد کون تھے اور ان کی حالت کیا تھی اس حوالے سے فوری کوئی معلومات نہیں مل سکیں۔

نئی ہنگامی صورتحال کا تذکرہ امریکی اخبار "واشنگٹن پوسٹ" کے ایک مختصر انٹرویو میں کیا گیا ہے جس میں طیارے کی کمپنی کے مالک امریکی جان رمپل نے بتایا کہ پائلٹ کسی نامعلوم وجہ سے ہوش تھا اور جواب نہیں دے رہا تھا۔ اور یہ کہ جہاز میں سوار وہ لوگ جنہوں نے دنیا کے سب سے بڑے ملک کو خوفزدہ کر دیا تھا " پورا خاندان تھا"۔ اس کی اکلوتی بیٹی، پوتا اور آیا تھے۔ یہ سب پائلٹ کے ساتھ مردہ پائے گئے۔کمپنی کا مالک جان رمپل فلوریڈا کے معروف تاجر ہیں اور ریپبلکن پارٹی کے ایک ممتاز سیاسی عطیہ دہندہ بھی ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں