امریکا کی ایران کے بیلسٹک میزائل پروگرام میں معاونت پرایرانی، چینی اداروں پر پابندیاں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

امریکی محکمہ خزانہ نے ایران کے بیلسٹک میزائل پروگرام کی معاونت کرنے پر ایران، چین اور ہانگ کانگ میں موجود افراد اور کمپنیوں کے نیٹ ورک پر پابندیاں عاید کردی ہیں۔

امریکی محکمہ خزانہ نے منگل کے روز سات افراد اور چھے اداروں کو ان کے غیر قانونی کام کے الزام میں نامزد کیا ہے اور بیجنگ میں تعینات ایران کے دفاعی اتاشی پر بھی پابندیاں عاید کی ہیں کیونکہ انھوں نے ایران کے صارفین کے لیے چین سے فوجی خریداریوں میں تعاون کیا تھا۔

محکمہ خزانہ نے ایک بیان میں کہا ہے کہ اس نیٹ ورک نے مالی لین دین کیا تھااور ایران کے بیلسٹک میزائل کی تیاری میں اہم کردار ادا کرنے والے بنیادی کرداروں کو حساس اور اہم پرزوں اور ٹیکنالوجی کی خریداری میں سہولت فراہم کی ہے۔

محکمہ خزانہ کے انڈر سیکریٹری برائے دہشت گردی اور مالیاتی انٹیلی جنس برائن نیلسن نے اس عزم کا اظہار کیا ہے کہ واشنگٹن بین الاقوامی خریداری کے ایسے غیر قانونی نیٹ ورکس کو نشانہ بنانے کا سلسلہ جاری رکھے گا جو خفیہ طور پر ایران کے بیلسٹک میزائل کی تیاری اور دیگر فوجی پروگراموں کی معاونت کرتے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں