جان بچانےکی کوشش میں غلطی جان لیوا بن گئی، سرجری کے دوران سابق وزیر چل بسے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

مصر کے سابق وزیر صحت عارضہ قلب کے باعث سرجری کے دوران ڈاکٹروں کی غلطی کےباعث انتقال کرگئے۔

تفصیلات کے مطابق کل سوموار کی شام مصر کے سابق وزیر صحت ڈاکٹر احمد عماد الدین راضی دل کی سرجری کے دوران ڈاکٹروں کی غلطی کے باعث انتقال کر گئے۔

‘العربیہ ڈاٹ نیٹ’ کو ایک ذریعے نے بتایا کہ 68 سالہ سابق وزیر کو اچانک دل کا دورہ پڑا، جس کے بعد انہیں فوری طورپر مشرقی قاہرہ میں واقع نصر شہر کے ایک نجی ہسپتال میں داخل کرایا گیا۔ ڈاکٹروں نے وزیر موصوف کی سرجری کا فیصلہ کیا۔ سرجری کے دوران طبی غلطی سےان کی جان ہی چلی گئی۔

دوسری طرف موجودہ وزیر صحت ڈاکٹر خالد عبدالغفار نے سابق وزیر کی وفات پر افسوس کا اظہار کیا ہے۔ انہوں نے مرحوم کی خدمات کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہا کہ ڈاکٹر راضی ایک قابل علمی اور تحقیقی شخصیت تھے۔ انہوں نے علم وتحقیق کے میدان میں مقامی اور عالمی سطح پر کئی اہم کار نامے انجام دیے تھے۔

یہ بات قابل ذکر ہے کہ ڈاکٹر احمد عماد الدین راضی نے ستمبر سنہ 2015ء میں مصر میں وزارت صحت کا قلمدان سنبھالا اور جون سنہ 2018ء تک اس عہدے پر فائز رہے۔ اس کے بعد ڈاکٹر ہالہ زاید نے ان کی جگہ وزارت صحت کا قلم دان سنبھالا۔

عماد الدین راضی 8 جون سنہ 1955ء کو پیدا ہوئے۔ اسی مہینے میں ان کا انتقال ہوا۔ انہوں نے سنہ1985ء میں بیچلر آف میڈیسن، سنہ 1987ء میں آرتھوپیڈکس میں ماسٹر اور 1989ء میں پی ایچ ڈی کی ڈگری حاصل کی تھی۔

ڈاکٹر احمد عماد الدین کو مصر کے مشہور آرتھوپیڈک سرجنوں میں شمار کیا جاتا ہے۔ اپنے کیریئر کے دوران ڈاکٹر راضی متعدد کلیدی عہدوں پر فائز رہے جن میں عین الشمس یونیورسٹی کے فیکلٹی آف میڈیسن کے ڈپٹی ڈین کی ذمہ داری بھی شامل ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں