فن لینڈ کا روس کے نو سفارت کاروں کوجاسوسی کے الزام میں ملک بدر کرنے کا اعلان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

فن لینڈ نے ہیلسنکی میں روسی سفارت خانے میں تعینات نو سفارت کاروں کو انٹیلی جنس مشنوں پر کام کرنے کے الزام میں ملک بدر کرنے کا اعلان کیا ہے۔

فن لینڈ کے صدر کے دفتر سے جاری ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ ان کے اقدامات سفارتی تعلقات سے متعلق ویانا کنونشن کے منافی ہیں۔یہ فیصلہ فن لینڈ کے صدر سولی نینستو اور ملک کی وزارتی کمیٹی برائے خارجہ اور سلامتی پالیسی کے اجلاس میں کیا گیا ہے۔

ہیلسنکی میں روسی سفارت خانے نے فوری طور پر تبصرہ کرنے کی درخواست کا جواب نہیں دیا۔نارڈک ہمسایہ ممالک ناروے اور سویڈن نے بھی حالیہ مہینوں میں روسی سفارت کاروں کو اس دعوے پر ملک بدر کردیا ہے کہ وہ درحقیقت انٹیلی جنس افسر تھے اور سراغرسانی کی سرگرمیوں میں ملوّث تھے۔

ماسکو نے اس بات کی تردید کی ہے کہ اس کے سفارت کار نامناسب سرگرمیوں میں ملوّث ہیں اور اس کے جواب میں ناروے اور سویڈن کے سفارت کاروں کو ملک بدر کر دیا گیا ہے۔ فن لینڈ نے اپریل میں نیٹو میں شمولیت اختیار کی تھی جس سے ہمسایہ ملک روس پریشان تھا۔

نینستو اور فن لینڈ کی وزارتی کمیٹی برائے خارجہ اور سلامتی پالیسی نے منگل کے روز یوکرین میں نوفا کاخوفکا ڈیم کی تباہی کی بھی مذمت کی ہے اور اسے انسانی اور ماحولیاتی تباہی قرار دیا ہے۔

ان کا کہنا تھاکہ ’’یہ دھماکا ایک نئے انداز میں جنگ میں اضافے کی نشان دہی کرتا ہے، جس سے یوکرین میں شہریوں اور ماحولیات کے لیے بڑے پیمانے پر تباہی ہوئی ہے‘‘۔

یوکرین نے روس پر الزام عاید کیا ہے کہ اس نے جان بوجھ کر جنگی جرم کا ارتکاب کیا ہے اور ڈیم کو دھماکے سے اڑا دیا ہے جبکہ کریملن کا کہنا ہے کہ یہ یوکرین ہی تھا جس نے اسے سبوتاژ کیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں