مراکش میں ہونے والی فوجی مشقوں میں اسرائیل کی پہلی بار شرکت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائیلی فوج کے ایک اعلان میں بتایا گیا ہے کہ براعظم شمالی افریقہ میں واقع ملک مراکش میں منگل سے شروع ہونے والی سب سے بڑی جنگی مشقوں میں پہلی مرتبہ اسرائیلی فوجی بھی شرکت کریں گے۔

سوموار کو رات گئے جاری کردہ فوجی بیان کے مطابق ’'افریقی شیر‘‘ کوڈ نام سے ہونے والی بین الاقوامی فوجی مشقوں میں اسرائیلی ڈیفنس فورسز کے دستے پہلی بار شریک ہو رہے ہیں۔

’’اسرائیلی فوج کے ایلیٹ پیادہ یونٹ سے تعلق رکھنے والی گولانی ریکی بٹالین کا 12 رکنی دستہ اور کمانڈ ’'افریقی شیر‘‘ مشقوں میں شرکت کے لیے بھیجے گئے ہیں۔ ان مشقوں میں اٹھارہ ملکوں سے کم سے کم 8000 سپاہی شرکت کر رہے ہیں۔‘‘

مراکش میں ہونے والے افریقن اسد فوجی مشقوں کا یہ 19واں ایڈیشن ہے۔ ان مشقوں کا اہتمام امریکہ اور مراکش نے مل کر کیا ہے۔

اسرائیلی فوجی بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ اگلے دو ہفتوں میں فوجیوں کو دوران لڑائی درپیش چیلنجوں کے مقابلے کے علاوہ اربن وار فیئر اور انڈر گراؤنڈ [خفیہ] وار فیئر کی تربیت دی جائے گی۔ اسرائیلی فوجیوں کے ہمراہ مشقوں میں شریک دوسرے ملکوں کے فوجی بھی شامل ہوں گے۔

گذشتہ برس اسرائیل نے ان مشقوں میں بین الاقوامی فوجی مبصر کے طور پر شرکت کی، ایکسرسائز میں اسرائیلی فوجی عملی طور پر شریک نہیں تھے۔

مراکش کی شاہی مسلح افواج کے مطابق مشقوں میں آپریشنل منصوبہ بندی، بڑے پیمانے پر تباہی پھیلانے والے ہتھیاروں کا مقابلہ، بری، بحری اور فضائی ٹیٹکل ٹریننگ سمیت چھاتا بردار کارروائیاں منظم کرنے کی تربیت دی جائے گی۔

مراکش اور اسرائیل سکیورٹی، فوجی، تجارت اور سیاحت کے شعبوں میں دسمبر 2020 کے بعد سے تعلقات نارملائز ہونے کے بعد سے تعاون کر رہے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں