کینیڈا کی لگی آگ کے دھویں کے باعث نیویارک میں پروازیں معطل کردی گئیں

دھویں نے شہر کو گھیرے میں لے لیا، بیرونی سرگرمیاں معطل کردی گئی ہیں: میئر نیو یارک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

امریکی فیڈرل ایوی ایشن ایڈمنسٹریشن نے کہا ہے کہ کینیڈا کی آگ سے اٹھنے والا دھواں نیوی گیشن کو متاثر کرتا رہے گا۔ ہم نے نیویارک ایئرپورٹ کے لیے جانے والی پروازیں معطل کر دی ہیں۔ دیکھیں کینیڈا کے جنگل کی آگ نیو یارک سٹی کو نارنجی بنا دیتی ہے۔ کینیڈا کو تباہ کرنے والی جنگل کی آگ کے دھویں نے نیویارک کو گھیرے میں لے لیا۔ اس آگ نے امریکہ کے مشرقی ساحل کے ساتھ ساتھ شہروں کو فضائی آلودگی کی وارننگ جاری کرنے اور ہزاروں افراد کو کینیڈا میں اپنے گھر خالی کرنے پر مجبور کر دیا ہے۔ تباہ کن آگ کی وجہ سے 20 ہزار سے زیادہ افراد اپنے گھروں کو چھوڑ کر بھاگ گئے ہیں۔ کینیڈا میں تقریباً 3.8 ملین ہیکٹر اراضی جل گئی، وزیر اعظم جسٹن ٹروڈو نے جنگل کی آگ کے اس موسم کو ریکارڈ شدہ تاریخ میں بدترین قرار دے دیا ہے۔

امریکی ماحولیاتی تحفظ کی ایجنسی نے کہا کہ شمال مشرقی امریکہ میں 100 ملین سے زیادہ لوگوں کو، اسی طرح مغرب سے شکاگو اور جنوب سے اٹلانٹا تک کینیڈا سے آگ کے دھوئیں کی آمد کے بعد آلودگی کی وارننگ موصول ہوئی ہیں۔ دھوئیں کے بادلوں نے نیویارک کی مشہور فلک بوس عمارتوں کو ڈھانپ دیا ہے۔ پروازوں میں اور کھیلوں کے مقابلوں میں تاخیر ہو رہی ہے۔ نیو یارک سٹی میں تھائی لینڈ سے تعلق رکھنے والی سیاح نشا سویتیانون نے کہا ہے کہ اس دھویں سے باربی کیو کی بو آ رہی ہے۔ میئر ایرک ایڈمز نے نیویارک سے بیرونی سرگرمیوں کو محدود کرنے کے لیے کہا کہ یہ میراتھن کی تربیت کا دن نہیں ہے۔ نیو یارک شہر کے سرکاری سکولوں میں تمام بیرونی سرگرمیاں معطل کر دی گئی ہیں کیونکہ سموگ نے مجسمہ آزادی اور مین ہٹن کے آسمان پر چھائی ہوئی ہے۔

حد نگاہ کم ہونے کی وجہ سے شہر کے ایئرپورٹس پر پروازوں کی آمد و رفت کم کردی گئی ہے۔ امریکی صدر جو بائیڈن نے ٹویٹر پر لکھا ہے کہ آگ پر قابو پانے میں مدد کے لیے 600 سے زائد فائر فائٹرز کے ساتھ ساتھ دیگر عملے اور آلات کو کینیڈا بھیجا گیا ہے۔ کینیڈا میں صوبہ کیوبیک کے سربراہ فرانکوئس لیگلٹ نے کہا کہ صوبے سے اب تک 11 ہزار افراد کو نکالا جا چکا ہے۔ مزید لوگوں کے انخلا کی توقع ہے۔ وائٹ ہاؤس کے مطابق بائیڈن نے بدھ کے روز ٹروڈو سے بات کی تھی اور تباہ کن اور تاریخی جنگل کی آگ سے نمٹنے کے لیے اضافی مدد کی پیشکش کی۔

آگ پر قابو پانے کی کوشش میں یورپی یونین کے کئی ملکوں نے کینیڈا میں تقریباً 300 فائر فائٹرز بھیجنے کی پیشکش کی ہے۔ یورپی کمیشن کی صدر ارسولا وان ڈیر لیین نے بتایا کہ فرانس، پرتگال اور سپین نے 280 سے زیادہ فائر فائٹرز بھیجنے کی پیشکش کی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں