اڈانی گروپ کی ہنڈن برگ کے فیصلے کے بعد مزید قرض کے حصول کے لیے بات چیت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

بھارت کا اڈانی گروپ عالمی بینکوں سمیت قرض دہندگان کے ساتھ بات چیت کر رہا ہے کیونکہ وہ پچھلے سال امبوجا سیمنٹس لمیٹڈ کے حصول کے لیے 3.8 ارب ڈالر تک کے قرض کی سہولت دوبارہ حاصل کرنا چاہتا ہے۔

ذرائع نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ بھارتی ٹائیکون گوتم اڈانی کی ملکیت والی بندرگاہوں سے پاور تک کارپوریشن اس بات پرغورکررہی ہے کہ آیا اصل قرض کو طویل میچورٹی مدت کے ساتھ قرض میں تبدیل کیا جائے یا نہیں اور اس منصوبے کے بارے میں بینکوں سے انفرادی طور پر بات چیت شروع کردی ہے۔

یہ کوشش اس بات کا ایک اہم امتحان ہے کہ آیاعالمی قرض دہندگان کے دروازے کمپنی کے لیے دوبارہ کھلیں گے یا نہیں کیونکہ امریکی شارٹ سیلر ہنڈن برگ نے جنوری میں اڈانی گروپ پر بڑے پیمانے پر کارپوریٹ بدانتظامی کا الزام عاید کیا تھا۔اڈانی نے ان الزامات کی تردید کی تھی۔

ذرائع کا کہنا ہے،اڈانی کو توقع ہے کہ یہ عمل تین سے چار ماہ کے اندر مکمل ہوجائے گا اور زیادہ تر موجودہ قرض دہندگان کے اس میں حصہ لینے کی توقع ہے۔ اڈانی کے ترجمان نے فوری طور پر تبصرہ کی درخواست کا جواب نہیں دیا۔

ذرائع نے بتایا کہ بارکلیز پی ایل سی، ڈوئچے بینک اے جی، اسٹینڈرڈ چارٹرڈ پی ایل سی اور مٹسوبشی یو ایف جے فنانشل گروپ انکارپوریٹڈ جیسے بینک ری فنانسنگ معاہدے میں حصہ لینے کے لیے بات چیت کر رہے ہیں، جبکہ کچھ قرض دہندگان معاہدے کی منظوری کے لیے اپنی متعلقہ بین الاقوامی کریڈٹ ٹیموں کے پاس گئے ہیں۔ بارکلیز، ڈوئچے، ایم یو ایف جی اور اسٹینڈرڈ چارٹرڈ نے تبصرہ کرنے سے انکار کر دیا۔

اگر یہ منصوبہ آگے بڑھتا ہے تو یہ ہنڈن برگ کی جانب سے ایک موقع پر کمپنی کے حصص سے 150 ارب ڈالر سے زیادہ کی کٹوتی کے بعد کاروبار کی طرف لوٹنے کا تازہ اشارہ ہوگا۔

بھارت کی سپریم کورٹ کی جانب سے مقرر کردہ ماہرین کے ایک پینل نے بھی گذشتہ ماہ اپنی ایک رپورٹ میں کہا تھا کہ اڈانی کے حصص میں اتارچڑھاؤ کے پیچھے کوئی ریگولیٹری ناکامی یا غلط کام نہیں ہے۔ اس کے باوجود اڈانی گروپ کے خلاف شارٹ سیلر کے الزامات کی تحقیقات مکمل کرنے کے بعد اگست میں انڈیا کے سکیورٹیز واچ ڈاگ کی جانب سے ایک اور فیصلہ متوقع ہے۔

ارب پتی اڈانی کے گروپ نے گذشتہ سال ہولسیم اے جی کے بھارت میں سیمنٹ اثاثوں کی خریداری نے اس کو ملک کا دوسرا سب سے بڑا گروپ بنا دیا تھا۔ اس سودے کی مالی اعانت کے لیے 2023 اور 2024 میں پختہ ہونے والے قرضے ماریشس کے ڈومیسائل اینڈیور ٹریڈ اینڈ انویسٹمنٹ نے لیے تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں