برطانوی طیارہ میں ہولناک واقعہ، بدترین ہچکولوں سے 5 افراد زخمی

برٹش ائیرویز کا طیارہ سنگا پور سے لندن جا رہا تھا کہ شدید جھٹکا لگنے عملہ کے 5 افراد زخمی ہوئے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

برٹش ایئرویز کے ایک طیارے کے مسافروں نے 30 ہزار فٹ کی بلندی پر دہشت کے ناقابل بیان لمحات سے گزرنے کا تجربہ کیا ہے۔ طیارہ سنگا پور سے لندن جا رہا تھا کہ دوران پرواز اسے زبردست ہوا کے دباؤ کا سامنا کرنا پڑا۔ خلیج بنگال پر "شدید اور مسلسل" ایئر ٹربو لینس یا ہچکولوں کے نتیجے میں فلائٹ کے عملے کے 5 افراد شدید زخمی ہو گئے۔

عملے کے ایک رکن کی ٹخنے کی ہڈی ٹوٹ گئی، دوسرے نے اپنے کولہے پر شدید چوٹ کی جانچ کرنے کے لیے ایم آر آئی سکین کرایا۔ عملے کا ایک اور رکن ٹخنے کی سرجری کے بعد ہسپتال میں ہی ہے۔

خوفناک پرواز کے دوران مسافروں کو اپنی نشستوں پر بیٹھنے پر مجبور کرنے کے لیے باندھی گئی بیلٹ کے باعث تکلیف کا سامنا کرنا پڑا۔ بیلٹ سے ان کے جسموں پر نشانات پڑ گئے۔

ہوا کے کم ہونے سے طیارے کو لگنے والے ہچکولے کے نتیجے میں کپتان نے سنگاپور واپس آنے کا فیصلہ کرلیا۔ مسافروں کو ہوٹل میں رہائش فراہم کی گئی اور بعد میں آنے والی پروازوں کی دوبارہ بکنگ کرائی گئی۔

یہ 5 فٹ گرا اور دوبارہ اٹھ گیا۔

برٹش ایئرویز کے ایک ذریعہ نے بتایا کہ ایئر لائنز نے گزشتہ پانچ سالوں میں ایسا کچھ نہیں دیکھا تھا۔ طیارہ اچانک ہل رہا تھا پھر وہ 5 فٹ گرا اور غیر آرام دہ جھٹکوں کی حرکت میں دوبارہ اٹھ گیا۔

برٹش ایئر ویز کے ترجمان نے اخبار کو بتایا کہ حفاظت ہمیشہ ہماری ترجیح ہوتی ہے۔ ہماری پروازوں میں سے ایک کو ہوا کے بہاؤ کی تبدیلی کی وجہ سے شدید ہچکولے کی حالت سے گزرنا پڑا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں