سابق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی خفیہ آڈیو لیک نے ہلچل مچا دی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

ایک میٹنگ کی ایک آڈیو ریکارڈنگ ، جس میں سابق صدر ڈونلڈ ٹرمپ، ایک انٹرویو لینے والے کے ساتھ ایک انتہائی خفیہ دستاویز پر گفتگو کر رہے ہیں۔ ایسا لگتا ہے کہ بعد کے ان کے اس دعوے کی نفی کرتی ہے کہ ان کے پاس ایسی دستاویزات نہیں بلکہ صرف خبروں کے تراشے تھے۔

یہ ریکارڈنگ اسپیشل کونسل جیک اسمتھ کی جانب سے خفیہ معلومات کے غلط استعمال کے لئے، ٹرمپ پر فرد جرم عائد کئے جانے کا ثبوت ہو سکتا ہے۔

یہ دو ہزار اکیس میں دئیے گئے ایک انٹرویو سے لی گئی ہے جو ٹرمپ نے اپنے نیو جرسی ریزورٹ میں اپنے سابق چیف آف اسٹاف مارک میڈوز کی یاد داشتوں پر کام کرنے والے لوگوں کے لئے دیا تھا۔

جیک اسمتھ کی جانب سے جو فرد جرم سابق صدر پر عائد کی گئی ہے، اس میں الزام لگایا گیا ہے کہ اسوقت ٹرمپ کے ساتھ ایک رائٹر، ایک پبلشر اور ٹرمپ کے عملے کے جو دو لوگ میٹنگ میں شریک تھے، انہیں، ایک ایسے غیر ملک پر جس کی وضاحت نہیں کی گئی تھی، پنٹاگان کے حملے کے منصوبے کے بارے میں خفیہ معلومات دکھائی گئی تھیں۔

ٹرمپ پر فرد جرم
ٹرمپ پر فرد جرم

"ٹرمپ کے الفاظ تھے، "یہ کاغذات ہیں، "جس سے ایسا اشارہ ملتا تھا جیسے ان کے پاس پنٹاگان کی خفیہ دستاویز ہے جس میں ایران پر حملے کے منصوبے درج ہیں۔

سابق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی مبینہ آڈیو لیک نے ہلچل مچا دی۔ سی این این خفیہ دستاویزات پر مبنی آڈیو لیک سامنے لے آیا ۔ آڈیو میں ٹرمپ اپنے اسٹاف ممبرز کیساتھ خفیہ دستاویزات پرگفتگو کر رہے ہیں۔ آڈیو لیک میں ڈونلڈ ٹرمپ نےخفیہ دستاویزات کو بغیر اجازت تحویل میں رکھنے کا اعتراف کر لیا۔

امریکی چینل کی جانب سے جاری کردہ آڈیو میں ایک ایسی گفتگو شامل ہے جس میں لگتا ہے کہ سابق امریکی ٹرمپ کے پاس پنٹاگان کی خفیہ دستاویز ہے جس میں ایران پر حملہ کرنے کا منصوبہ ہے، آڈیو لیک کے مطابق ڈونلڈ ٹرمپ کو کہتے سنا جا سکتا ہے کہ ’یہ وہ دستاویزات‘، ڈونلڈ ٹرمپ آڈیو میں حوالہ دے رہے تھے کہ ’یہ خفیہ معلومات ہے‘۔

آڈیو لیک میں اس بات کا بھی انداز ہ لگایا جا سکتا ہے کہ وہ کمرے میں موجود لوگوں کو بتا رہے کہ یہ فوج کی طرف سے مجھے دیا گیا اور آپ نے بھی دیکھ لیا، بطور صدر اب میں یہ دستاویزات خفیہ نہیں رکھ سکتا ، کیونکہ آپ لوگ یہ جانتے ہیں،اسی آڈیو لیک میں سابق امریکی صدر ٹرمپ کے عملے میں موجود ایک شخص جواب دیتا ہے کہ ’اب ہمیں ایک مسئلہ درپیش ہے‘۔

سابق امریکی صدر کو آڈیو لیک میں یہ کہتےبھی سنا جا سکتا ہے کہ کیا یہ دلچسپ نہیں ہے؟ یہ بہت اچھا ہے، ان الفاظ کے ساتھ آڈیولیک کی ریکارڈنگ ختم ہو جاتی ہے۔

خیال رہے محکمہ انصاف نے سابق امریکی صدر ٹرمپ پر جاسوسی ایکٹ سمیت دیگر قوانین خلاف ورزی کا الزام عائد کیا ہے، ڈونلڈ ٹرمپ میں لگنے والےالزامات میں مزید بتایا گیا کہ یہ عہدہ چھوڑنے پر خفیہ دستاویزات اپنے ساتھ لے گئے اور انہیں متعلقہ ادارے کو فراہم کرنے میں ناکام رہے۔

فرد جرم میں محکمہ انصاف نے اجلاس کی آڈیو ریکارڈنگ سمیت دیگر شواہد بیان کرتے ہوئے بتایا کہ ٹرمپ ایک مصنف، ایک پبلشر اور اپنے سٹاف کے دولوگوں کو ’انتہائی خفیہ‘ دستاویزات دکھائے تھے۔

واضح رہے کہ سابق صدر پر الزام ہے کہ انہوں نے جان بوجھ کرخفیہ دستاویزات جمع کر رکھی ہیں جنہیں انہوں نے غیر قانونی طور پر فلوریڈامیں اپنی رہائش گاہ منتقل کیا اور واپسی سے انکار کرتے رہے،سابق امریکی صدر ٹرمپ تفتیش کاروں کوبھی خفیہ دستاویزات کی برآمدگی میں رکاوٹ ڈالنے کی سازش کرتے تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں