واگنر کے باعث زیلنسکی کا بیلاروس کے ساتھ سرحد پر سکیورٹی سخت کرنے کا حکم

بیلاروس کے صدر نے کہا تھا ہماری فوج روسی واگنر افواج کے تجربے سے فائدہ اٹھا سکتی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

یوکرین کے صدر زیلنسکی نے واگنر گروپ کے ارکان کی روس سے بیلا روس میں منتقل ہونے کے بعد یوکرین کی بیلا روس سے ملحق سرحد پر حفاظتی انتظامات سخت کرنے کا حکم دے دیا ہے۔ یوکرینی صدر نے یہ ہدایات عسکری قیادت کے نمائندوں اور سیکیورٹی اداروں کی قیادت سے ملاقات کے دوران جاری کیں۔

زیلنسکی نے "ٹیلی گرام" کے ذریعے اپنے چینل پر لکھا کہ کیف بیلاروس کی صورتحال کی مسلسل نگرانی کر رہا ہے۔ یوکرینی افواج کے کمانڈر انچیف ویلری زلوزنی اور یوکرینی مشترکہ افواج کے کمانڈر سرگئی نایف کو بیلاروس کے ساتھ سرحد پر سکیورٹی مضبوط کرنے کے حوالے سے اقدامات کے ایک سیٹ کو نافذ کرنے کی ہدایات موصول ہوگئی ہیں۔

زیلنسکی نے مزید واضح کیا کہ میں نے فوجی صورتحال کے متعلق رپورٹس سن لی ہیں اور فورسز کو توپ خانے اور گولہ بارود فراہم کرنے کے معاملے پر بھی غور کیا جا رہا ہے۔

12
12

واضح رہے گزشتہ ہفتے نجی ملٹری گروپ واگنر گروپ کے سربراہ ایوگنی پریگوزن نے روسی فوج اور اس کے کمانڈروں کے خلاف بغاوت کا اعلان کردیا تھا تاہم بیلاروس کے صدر کی مداخلت پر پریگوزن نے اپنے اعلان سے پسپائی اختیار کرلی۔

روسی صدر پوتین نے ابتدا میں بغاوت کو کچلنے کا عزم کیا تھا لیکن چند گھنٹوں بعد ایک معاہدہ طے پا گیا جس کے تحت پریگوزن اور اس کے کچھ جنگجو اہلکاروں کو بیلاروس جانے کی اجازت دے دی گئی۔ پریگوزن منگل کو روس سے بیلاروس چلے گئے تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں