سونے کے تحائف ترکیہ میں شادیوں کی سب سے نمایاں رسومات ہیں

ایسی شادیاں جن میں بڑی مقدار میں سونا اور پیسہ پیش کیا جاتا ہے ان لوگوں کا کلچر ہے جن کا تعلق سیکولر اور اسلامی بورژوازی سے ہو: ترک دانشور

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

ترکیہ میں حالیہ ہفتے ہونے والی ایک شاہانہ نوعیت کی شادی جس میں دلہا اور دلہن دونوں کو بیش قیمت تحائف دیے گئے تھے کے بعد ایک نئی بحث جاری ہے۔

ترکیہ میں ایک جوڑے کی شادی کی خبر اس وقت میڈیا میں توجہ کا مرکز بنی جب پتا چلا کہ دلہن کو چار کلو گرام سونا اور دلہا کو چھ ملین ترک لیرہ کی رقم تحفے میں دی گئی ہے۔ یہ رقم امریکی کرنسی میں دو لاکھ تیس ہزار ڈالر بنتی ہے۔

ماہرین کا کہنا ہےکہ شادی بیاہ پر اخراجات لوگ اپنی استطاعت اور جیب کی گنجائش کے مطابق کرتے ہیں مگر بعض علاقوں اور طبقوں میں شادیوں پر بھاری اخراجات کی الگ الگ رسمیں بھی بھی ہیں۔

ایک ترک دانشور اور محقق مصطفیٰ کمال جوش کون کے مطابق پورے ملک میں شادیوں اور ملک کے تمام خطوں میں زیورات پیش کرنا ایک فطری اور معمول کی بات ہے جہاں دلہا اور دلہن کو کچھ تحائف جیسے سونا، رقم اور دیگر قیمتی تحائف دیے جاتے ہیں۔

چند روز قبل ہونے والی شادی جس میں دلہا اور دلہن کو دیئے گئے تحائف توجہ کا مرکز بنےتو تحائف کے اعتبار سے کوئی انوکھی بات نہیں تھی۔ عموماً ایسا ہوتا ہے کہ لڑکی کو جتنا سونا دیا جاتا ہے اس کے قریب قریب رقم دلہا کو تحفے میں ملتی ہے۔ البتہ اس کی مقدارنے اسے غیرمعمولی بنا دیا۔

انقرہ یونیورسٹی کے شعبہ سوشیالوجی کے سابق ایسوسی ایٹ پروفیسر مصطفی کمال جوش کون نے ’العربیہ ڈاٹ نیٹ‘ کو بتایا کہ "زیادہ تر شادیوں میں دولہا اور دلہن کے رشتہ دار انہیں تحائف دیتے ہیں جو کہ بہت معمولی ہوتے ہیں۔ یہ تحائف شادی پر اخراجات میں اپنا حصہ ڈالنے میں مدد ہوتی ہے جس سے شادی والا خاندان اخراجات پورا کرتا ہے۔

البتہ "کچھ دن پہلے جو کچھ ہوا وہ ایک غیر معمولی واقعہ اس اعتبار سے ہے کیونکہ ایسا صرف قبائلی شادیوں میں ہوتا ہے۔ ایسا عموماً جنوب مشرقی اناطولیہ یا امیر بورژوا یا اسلامی بورژوازی کی شادیوں میں ہوتا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ "شادیاں جن میں بڑی مقدار میں سونا اور پیسہ پیش کیا جاتا ہے وہ سیکولر اور اسلامی بورژوازی سے تعلق رکھنے والوں اور بعض قبائل کے درمیان پایا جا سکتا ہے۔ ایسی شادیوں پرغریب طبقے میں احساس کم تری پیدا ہوتا ہے اور امیروں کے خلاف نفرت اور غصہ کے جذبات جنم لیتے ہیں۔

ترکیہ میں سماجی ڈھانچہ نسلی اور مذہبی امتیاز سے بالاتر ہے، شادی کی رسومات معاشرے کے تمام گروہوں کے لیے تقریباً ایک جیسی ہیں، لیکن جہیز اور خوراک کی فراہمی اور اس کی مقدار سے متعلق معاملات میں ان میں فرق ہے۔

ملک کے مختلف علاقوں میں دلہن کے لیے سونا پیشگی خریدا جاتا ہے اور سونے کے زیورات بعد میں اس کے رشتہ دار اسے تحفے کے طور پر پیش کرتے ہیں۔

ترکیہ کے متعدد علاقوں میں دلہن کے خاندان کو اپنے رشتہ داروں، اس کی بہنوں، پھوپھیوں، خالاؤں اور دیگر کو تحائف پیش کرنا ہوتے ہیں۔

اب تک ترکیہ میں آبادی کی اکثریت دولہے کے خاندان سے جہیز کی ادائیگی کے لیے کہتی ہے اور وہ سونے کی ایک مقدار بھی مانگتے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں