روس میں بغاوت

پریگوزن نے پوتین کے ’مستحکم‘ روس کا ’افسانہ‘تارتار کردیا: سابق روسی وزیر اعظم

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

روس کے سابق وزیر اعظم میخائل کاسیانوف نے کہا ہے کہ کرائے کی ملیشیا واگنر کے سربراہ ایوگینی پریگوزن کی گذشتہ ہفتے قلیل مدتی بغاوت نے صدر ولادی میرپوتین کے ’’استحکام‘‘ کے ’’مفروضے‘‘ کو تارتار کر دیا اور درحقیقت بغاوت نے انھیں روس کے اندر کافی کمزور کر دیا ہے۔

کاسیانوف سنہ 2000ء سے 2004 تک روس کے وزیر اعظم رہے تھے۔انھوں نے کہا کہ ’’بنیادی اثر بہت آسان اور بہت سادہ ہے‘‘۔جرمن نشریاتی ادارے ڈی ڈبلیو کو دیے گئے ایک انٹرویو میں انھوں نے کہا کہ 20 سال سے روسی پروپیگنڈا لوگوں کو یہ یقین دلانے کی کوشش کر رہا تھا کہ صدر پوتین کی حکمرانی کی بنیاد استحکام اور ممکنہ خوشحالی ہے‘‘۔

پریگوزن نے گذشتہ ہفتے ایک مختصر بغاوت برپا کی تھی اوراس کا اختتام اس وقت ہوا جب انھوں نے ایک معاہدے پر رضامندی ظاہر کرنے کے بعد ماسکو کی جانب ویگنرجنگجؤؤں کا مارچ ختم کر دیا جس کے تحت انھیں روس میں ان کے خلاف کسی قانونی کارروائی کے بغیر بیلاروس میں جلاوطن کر دیا گیا۔انھوں نے ناکام بغاوت کے بعد اپنے پہلے بیان میں کہا کہ یہ مارچ بغاوت کی کوشش نہیں بلکہ ایک "مظاہرہ" تھا۔

پریگوزن کی بغاوت نے روس کے اندر اور بین الاقوامی سطح پر بھی زبردست اثر ڈالا۔ بین الاقوامی سیاست دانوں اور تجزیہ کاروں کے درمیان عام اتفاق رائے یہ ہے کہ بغاوت نے پوتین کو کمزور کر دیا ہے اور ایک ایسے نازک وقت میں جب ان کی افواج کو یوکرین میں شدید جوابی کارروائی کا سامنا ہے،اس ناکام بغاوت نے ان کی آہنی ہاتھوں سے حکمرانی کے بارے میں سوالات اٹھائے ہیں۔کاسیانوف نے کہا: پریگوزن اس افسانے، استحکام کی اس تصویر کو تباہ کرنے میں کامیاب رہا ہے۔

پریگوزن کی مختصر بغاوت کے بعد ، روسی قیادت نے تیزی سے استحکام ، سکون اور کنٹرول کی جھلک پیش کی۔ پوتین نے قوم سے خطاب میں ملک کو غیر مستحکم کرنے اور معاشرے کو توڑنے کی دشمن کی کوششوں کا مقابلہ کرنے کے لیے اتحاد اور حب الوطنی کی اہمیت پر زور دیا تھا۔ دوسری جانب وزیر دفاع سرگئی شوئیگو نے یوکرین میں روسی فوجیوں سے بغاوت کے بعد پہلی بار عوامی سطح پر شرکت کی۔

اس کے علاوہ وزیر خارجہ سرگئی لافروف نے ایک ہائی پروفائل اور خوب مشتہر کیے گئے انٹرویو میں حصہ لیا جس میں انھوں نے اس واقعے کے پیمانے اور اثرات کو کم کرنے کے لیے احتیاط سے تیار کردہ بیانات دیے۔ان میں چیلنجوں کا مقابلہ کرنے میں روسی ریاست کی مضبوطی اور لچک پر زور دیا گیا۔

مجموعی طور پر ، اعلیٰ روسی قیادت نے اپنے ٹول باکس میں موجود ہر آلے کو غیر متزلزل اتھارٹی کی تصویر بنانے ، قومی اتحاد کو فروغ دینے اور ملک کے سکیورٹی آلات پر اپنے کنٹرول کی توثیق کے لیے استعمال کیا۔

روسی خارجہ پالیسی کے ماہر اور اٹلانٹک کونسل میں غیر مقیم سینیر فیلو مارک این کاٹز نے العربیہ انگریزی کو بتایا: "ماتحتوں کے درمیان تنازعات، ان میں سے ایک کی جانب سے دارالحکومت کی جانب مارچ کرنے کے لیے فوج بھیجنا، کسی بھی ڈکٹیٹر کے لیے اچھا نہیں لگتا۔ مجھے توقع ہے کہ اب باقاعدہ افواج کے اندر سے پوتین کے خلاف دیگر ، زیادہ منظم ، اقدامات ہوسکتے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں