یمن اور حوثی

یمن:الحدیدہ اور تعز میں حوثیوں کے گولہ باری، بارودی سرنگوں سےگیارہ بچے جاں بحق و زخمی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

یمنی سرکاری اور انسانی حقوق کے ذرائع کے مطابق ایران نواز حوثی ملیشیا کے حملوں اور بارودی سرنگوں نے دو الگ الگ واقعات میں الحدیدہ اور تعز گورنریوں میں 11 بچے جاں بحق یا زخمی ہوئے۔

یہ دونوں واقعات ایک ایسے وقت میں پیش آئے جب شمالی صنعاء کی عمران گورنری کے رہائشیوں نے ایک اجتماعی قبر دریافت کی جس میں 16 افراد کو دفن کیا گیا تھا۔ اس اجتماعی قبر میں دفن کیے گئے لوگوں کو سنہ 2010ء میں حرف سفیان کے علاقے میں حکومت کے ساتھ جنگ کے دوران حوثی ملیشیا نے قتل کر دیا تھا۔

اس تناظر میں یمنی انسانی حقوق کے ذرائع نے اطلاع دی ہے کہ حوثی ملیشیا نے الحدیدہ کے جنوب میں واقع ضلع حیس میں وادی نخلہ کے علاقے میں شہریوں پر مارٹر حملہ کیا جس کے نتیجے میں آٹھ سے تیرہ سال کی عمر کے پانچ بچے زخمی ہو گئے۔

میون ہیومن رائٹس آرگنائزیشن نے بدھ کے روز ایک بیان میں کہا کہ ان بچوں کو مارٹر گولوں سے مویشی چراتے وقت نشانہ بنانا حوثیوں کی جانب سے بچوں کے حقوق کے کنونشن اور بین الاقوامی انسانی قانون کی کھلی خلاف ورزی ہے۔

انسانی حقوق کی تنظیم نے ان ہولناک خلاف ورزیوں کو فوری طور پر بند کرنے اور مجرموں کو کٹہرے میں لانے کا مطالبہ کیا۔

ادھرالحدیدہ گورنری کے ضلع حیس کے رہائشیوں پر حملے کی انسانی حقوق کی مذمت چند گھنٹے بعد حکومتی بیان میں کہا گیا تھا کہ شوکان میں حوثی ملیشیا کی جانب سے بچھائی گئی بارودی سرنگ کے دھماکے کے نتیجے میں ایک بچہ ہلاک اور پانچ دیگر زخمی ہوئے ہیں۔

ڈائریکٹوریٹ کے ڈائریکٹر عبد الجبار الصراری نے بتایا کہ 15 سالہ بچہ عرفات عبدہ غالب حوثی ملیشیا کی جانب سے بچھائی گئی بارودی سرنگ کے دھماکے میں اس وقت ہلاک اور پانچ زخمی ہو گئے جب وہ بھیڑ بکریاں چرا رہے تھے۔ یہ واقعہ تعز کے ایک دیہی علاقے الشعب الاحمر کے علاقے میں پیش آیا۔

دریں اثنا یمن میں سعودی مائن کلیئرنس پروجیکٹ (مسام) نے اطلاع دی ہے کہ اس کی ٹیموں نے متعدد آزاد گورنریوں میں دہشت گرد حوثی ملیشیا کی جانب سے بچھائی گئی 4,899 بارودی سرنگیں، میزائل اور غیر دھماکہ خیز آلات کو ہٹا دیا ہے۔ ’مسام‘ کی طرف سے کی گئی صفائی مہم کے دوران جون میں 752,681 مربع میٹر کے علاقے کو صاف کیا گیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں