روس ۔ يوکرین جنگ کے 500 دن مکمل ہونے پر زیلینسکی کا سٹرٹیجک اہمیت کے جزیرے کا دورہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

روسی يوکرينی جنگ کو شروع ہوئے پانچ سو دن ہو گئے ہيں تاہم بظاہر اس جنگ کا اختتام دکھائی نہيں ديتا۔ جون کے اوائل سے يوکرينی افواج ملک کے جنوب اور مشرق ميں روس کے زير قبضہ علاقوں کو بازياب کرانے کی کوشش ميں ہيں۔

مغربی ممالک کی اربوں ڈالر کی عسکری امداد اور فوجی ساز وسامان کی فراہمی کے باوجود يوکرينی دستے اب تک درجن بھر ديہات اور کچھ ہی علاقے آزاد کرانے ميں کامياب ہوئے ہيں۔

روسی افواج نے متعدد محاذوں پر سخت حفاظتی انتظامات کر رکھے ہيں اور ان کے پاس اسلحے کی بھی بھرمار ہے۔ يہی وجہ ہے کہ اب تک يوکرينی افواج کی پيش قدمی سست ہے۔

روسی افواج نے چوبيس فروری سن 2022 کے روز يوکرين پر حملہ کیا تھا۔ اس جنگ کے پانچ سو دن مکمل ہونے پر اقوام متحدہ نے بالخصوص عام شہريوں کی ہلاکتوں کی مذمت کی۔ يوکرين ميں اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کے مانیٹرنگ مشن (HRMMU) کے مطابق اب تک اس جنگ میں نو ہزار شہری مارے جا چکے ہيں جن ميں تقريباً 500 بچے بھی شامل ہیں۔


اس عالمی ادارے نے يہ بھی کہا ہے کہ مارے جانے والے شہریوں کی حقيقی تعداد اس سے کہيں زيادہ ہو سکتی ہے۔ يوکرين ميں اقوام متحدہ کے مبصر مشن کے نائب سربراہ نوئل کالہون نے بتايا کہ پچھلے سال کے مقابلے ميں رواں سال ہلاکتوں کا تناسب کم رہا البتہ مئی اور جون سے اس ميں پھر اضافہ ہونے لگا۔

يورپی کميشن کی صدر ارزولا فان ڈئر لاین نے اس موقع کی مناسبت سے اپنی ایک ٹويٹ ميں لکھا کہ 'جب تک ہو سکے گا، يوکرين کی مدد جاری رکھی جائے گی‘۔ اس ٹويٹ ميں انہوں نے مزید لکھا، ''يوکرين کے خلاف روسی جنگ کے پانچ سو دن، بہادر يوکرينی مزاحمت کے پانچ سو دن۔ يوکرين کے ليے يورپ کی حمايت کے پانچ سو دن۔‘‘

روس اور یوکرین جنگ کے تباہ کن آثار
روس اور یوکرین جنگ کے تباہ کن آثار

روسی يوکرينی جنگ کے پانچ سو دن مکمل ہونے کے موقع پر امريکا نے جمعے کے روز يک طرفہ طور پر يہ اعلان کيا تھا کہ کييف حکومت کو کلسٹر بم فراہم کيے جائيں گے۔ يوکرينی وزير دفاع نے ہفتے کے روز کہا کہ کلسٹر بم دفاعی مقاصد کے ليے صرف ان علاقوں ميں استعمال کيے جائيں گے، جہاں روسی دستے قبضہ کيے ہوئے ہيں۔ انہوں نے واضح کيا کہ يہ بم ہر گز روس کے اندر حملوں کے ليے استعمال نہيں کيے جائيں گے۔

دوسری جانب يورپی اتحادی امريکی فيصلے سے متفق دکھائی نہيں ديتے۔ برطانوی وزير اعظم رشی سوناک نے کہا کہ ان کا ملک اس کنونشن پر دستخط کر چکا ہے، جس کے تحت کلسٹر بموں کا استعمال ممنوع ہے اور اسی ليے وہ خود يوکرين کو امريکا کی جانب سے ايسے بم مہيا کيے جانے کی حوصلہ شکنی کے حامی ہيں۔

خار کییف کے ایک رہائشی کمپاؤنڈ کی پارکنگ میں حملہ: رائیٹرز
خار کییف کے ایک رہائشی کمپاؤنڈ کی پارکنگ میں حملہ: رائیٹرز

ہفتے کے روز صحافیوں سے بات چيت ميں برطانوی وزیر اعظم کا کہنا تھا کہ روس کی جانب سے غير قانونی طور پر مسلط کردہ جنگ ميں يوکرين کے دفاع کی کوششيں جاری رہيں گی۔ ادھر ہسپانوی وزير دفاع نے بھی آج ہی اس بارے ميں اپنے ملک کا موقف پيش کيا اور کہا کہ اسپین يوکرين کو کلسٹر بم فراہم کيے جانے کے خلاف ہے۔

دوسری جانب روسی وزارت خارجہ نے امريکی اقدام کو 'کمزوری اور بے بسی‘ سے تعبير کيا اور کہا يہ ثابت کرتا ہے کہ يوکرينی حملے دراصل ناکام ہو رہے ہيں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں