سیلابی ریلے میں پھنسی خاتون کو موت کے جبڑوں سے کیسے بچایا گیا؟ ویڈیو

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

کہتے ہیں کہ موت زندگی کی محافظ ہوتی ہے، جب تک موت کا وقت نہ آجائے تک کسی کو کچھ نہیں ہوتا۔ جب موت کا وقت آپہنچے تو وہ ہزار حفاظتی تدابیر میں بند قلعوں کے اندر بھی آتی ہے۔

تاہم اسپین میں ایک واقعے کی فوٹیج دیکھ کر موت زندگی کی محافظ کی کہاوت کے درست ہونے کا گمان گذرتا ہے۔ اس ویڈیو میں ایک خاتون کو تیز اور خوفناک سیلابی ریلے میں اپنی ہی گاڑی کی چھت پر معلق دیکھا جا سکتا ہے۔

ویڈیو دیکھتے ہوئے ایسے محسوس ہوتا ہے کہ اگلے لمحے یہ خاتون ریلے میں بہہ جائے گی مگر جسے اللہ رکھے اسے کون چکھے۔ خاتون مسلسل دو گھنٹے ریلے میں پھنسے رہنے کے بعد آخر کار ریسکیو کارکنوں کی مدد سے اپنی جان بچانے میں کامیاب ہوجاتی ہے۔

مقامی میڈیا کے مطابق یہ واقعہ اسپین کے خود مختار شمال مشرقی علاقے کے ’زاراگوزا ‘شہر میں پیش آیا۔

محکمہ موسمیات کی طرف سے ریڈیو پر تمام شہریوں بالخصوص سڑکوں پر گاڑیاں چلانےوالوں کو متنبہ کیا گیا تھا کہ شدید بارشوں کی وجہ سے مختلف مقامات پر سیلابی ریلوں کا خدشہ ہے۔ اس لیے شہری محتاط رہیں اورسڑکوں پر سیلابی ریلوں کی صورت میں گاڑیاں درختوں کے ساتھ روک کر خود ان کی چھتوں پر چڑھ جائیں۔

اسی اثناء میں ایک خاتون کی گاڑی کو اچانک سیلابی ریلے نے ٹکر ماری۔ اس نے گاڑی ایک جگہ روکنے کی کوشش کی اور اسے بند کرکے خود اس کی چھت پر چڑھ گئی۔ اس کے اطراف سےسیلابی ریلہ طوفانی انداز میں بہہ رہا تھا اور وہ مدد کے لیے پکار رہی تھی۔ قریب کھڑے لوگوں نے خاتون کی ہمت بڑھانے کی کوشش کی اور اسے بتایا کہ انہوں نے امدادی کارکنوں اور حکام کو طلب کرلیا ہے۔ وہ ثابت قدمی سے اپنی گاڑی پر رہے۔

اس دوران ایک ٹی وی چینل کی خاتون رپورٹر نے بھی سیلابی ریلے میں پھنسی خاتون کے واقعے کو ٹی وی پر براہ راست نشربھی کر دیا۔

مقامی میڈیا کے مطابق خطرناک نشیبی علاقہ ہونے کی وجہ سے یہاں پر اکثر ٹریفک حادثات بھی پیش آتے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ ان حادثات سے بچنے کےلیے حکومت نے دو سرنگیں بھی کھود رکھی ہیں اس کے باوجود حادثات رونما ہوتے رہتے ہیں۔ اسی وجہ سے اس علاقے کو‘موت کا کنواں‘ بھی کہا جاتا ہے۔

ویڈیو میں دیکھا جا سکتا ہے کہ خاتون کار کی چھت پر پانی میں پھنسی رہی اور دو گھنٹے کے بعد امدادی کارکن اس تک پہنچے جنہوں نے اس کی زندگی بچائی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں