امریکا: ایک گھنٹے میں تقریبا چھ بوتلیں پانی پینے والا بچہ ہسپتال داخل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

امریکی اخبار ’نیویارک پوسٹ‘ کے مطابق جنوبی کیرولائنا کے ایک بچے کو ایک گھنٹے میں 6 بوتلیں پانی پینے کے بعد ہسپتال میں داخل کرایا گیا ہے۔

میڈیا میں بتایا گیا کہ 10 سالہ رے جارڈن نے چار جولائی کے ویک اینڈ پر باہر کھیلتے ہوئے بہت زیادہ پانی پیا۔

رے کی والدہ سٹیسی جارڈن نے بتایا کہ بچہ اپنے کزنز کے ساتھ کھیلنے کے لیے باہر گیا ہوا تھا۔ وہ گھر کے گرد پورے دائروں میں بھاگ رہے تھے، لڑکوں کا ایک گروپ ایک ساتھ ٹرامپولین پر چھلانگیں بھی لگا رہا تھا۔"

انہوں نےبات جاری رکھتے ہوئےمزید کہا کہ "رے اندر گیا اور کچھ پانی لیا۔ جس چیز کا ہمیں احساس نہیں تھا وہ یہ تھا کہ اس نے کتنا پانی پیا۔ اس نے 8:30 اور 9:30 بجے کے درمیان 6 بوتلیں پی لیں۔

10:30 بجے تک رے اپنے سر یا اپنے بازوؤں یا کسی بھی چیز پر قابو نہیں رکھ سکتا تھا۔ اس کے والد جیف جارڈن نے کہا کہ "ایسا لگ رہا تھا کہ وہ نشے میں تھا اور اس نے شراب پی رکھی تھی۔ وہ اس وقت ذہنی طور پر معذور لگ رہا تھا۔"

والدین فوراً اپنے بچے کو ہسپتال لے گئے۔ بہت سے ٹیسٹ کیے گئے جس کے بعد ڈاکٹروں نے رے کا علاج پانی میں نشہ، یا خون میں سوڈیم کی خطرناک حد تک کم ہونے کی وجہ سے کیا۔ بہت زیادہ پانی پینے سے گردے بھر جاتے ہیں۔

سٹیسی نے کہا کہ " ڈاکٹر اسے کچھ دے رہے تھے تاکہ اس کو پیشاب کرنے میں زیادہ سے زیادہ مدد کر سکے اور اس کے جسم میں موجود پانی باہر نکلے۔

ڈاکٹروں نے اس کے خون کو ریگولیٹ کرنے کے لیے سوڈیم اور پوٹاشیم دینے میں بھی 8 گھنٹے اس کا علاج کیا۔

اس کی ماں نے وضاحت کی "پھر وہ اٹھا اور کھانے کے بارے میں پوچھا، اور اس کے ٹھکانے کے بارے میں بھی۔"

اس کے والدین نے مزید کہا کہ رے اس کے بعد سے مکمل صحت یاب ہو گیا ہے اور اس کے بعد سے اس نے کوئی دوسری علامات نہیں دکھائی ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں