بھارت میں پانچ سال میں ساڑھے 13کروڑافراد غُربت کی لکیر سے نکل آئے:سرکاری رپورٹ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

بھارت میں مارچ 2021 تک گذشتہ پانچ سال کے دوران میں ساڑھے 13 کروڑ افراد غُربت سے بچ گئے ہیں یا غُربت کی لکیر سے نکل آئے ہیں۔ یہ تعداد کل ملکی آبادی کا قریباً 10 فی صد ہے۔

غُربت کی جانچ کرنے کے لیے اقوام متحدہ کے کثیرالجہت غُربت انڈیکس (ایم پی آئی) کا استعمال کیا گیا ہے۔اس کے مطابق دیہی علاقوں میں غربت میں سب سے زیادہ کمی دیکھی گئی ہے۔یہ انڈیکس غذائی قلت، تعلیم اورحفظانِ صحت جیسے 12 اشاریوں پر مبنی ہے۔ اگر لوگ تین یا اس سے زیادہ اشاریوں میں محروم ہیں، تو ان کی شناخت "ایم پی آئی غریب" کے طور پر کی جاتی ہے۔

رپورٹ جاری کرنے والے تھنک ٹینک نَیتی آیوگ کی نائب چیئرمین سمن بیری نے کہا:’’غذائیت میں بہتری، اسکول کی تعلیم، صفائی ستھرائی اور کھانا پکانے کے ایندھن نے غُربت کو کم کرنے میں اہم کردار ادا کیا ہے‘‘۔

نیشنل فیملی ہیلتھ سروے 2019-21 پر مبنی رپورٹ کے مطابق، غُربت میں زندگی بسر کرنے والی آبادی کی شرح 2015-16 میں 25 فی صد تھی۔ یہ 2019-21 میں گھٹ کر15 فی صد رہ گئی۔

اقوام متحدہ کے ترقیاتی پروگرام (یو این ڈی پی) کی گذشتہ ہفتے جاری کردہ ایک رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ کثیرالجہت غُربت میں زندگی بسر کرنے والے لوگوں کی تعداد 2005 میں 55 فی صد تھی اور یہ گھٹ کر 2021 میں بھارت کی آبادی کا 16.4 فی صد رہ گئی ہے۔

یو این ڈی پی کے تخمینوں کے مطابق، 2021 میں بھارت میں 2.15 ڈالر یومیہ پرگذارہ کرنے والوں کو غُربت کی لکیر سے نیچے قراردیا گیا تھا اور اس سال غُربت کی زندگی بسر کرنے والے لوگوں کی تعداد گھٹ کر 10 فی صد رہ گئی تھی۔

بھارت کی وفاقی حکومت قریباً 80 کروڑ لوگوں کو مفت اناج مہیّا کرتی ہے۔ یہ تعداد ملک کی کل ایک ارب 40 کروڑ آبادی کا قریباً 57 فی صد ہے، جبکہ ریاستیں تعلیم، صحت، بجلی اور دیگر خدمات پر زرتلافی دیتی ہیں اور اس پراربوں ڈالر خرچ کرتی ہیں۔

رپورٹ کے مطابق جس ریاست میں سب سے زیادہ تعداد میں لوگ غُربت سے باہر نکلے ہیں، وہ اُتر پردیش ہے۔اس کی آبادی 34 کروڑ 30 لاکھ نفوس پر مشتمل ہے اور یہ ملک کی سب سے زیادہ آبادی والی اور بڑی ریاست ہے، اس کے بعد بہار اور مدھیہ پردیش کی ریاستیں ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں