شام میں امریکی موجودگی غیرقانونی اور اس سے دمشق کی استحکام کو خطرہ ہے:بوگدانوف

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

مشرق وسطیٰ اور افریقی ممالک کے لیے روسی صدر کے خصوصی ایلچی اور نائب وزیر خارجہ میخائل بوگدانوف نے کہا ہے کہ ریاض اور ابوظبی کے ساتھ روس کے تعلقات آگے بڑھ رہے ہیں۔

بوگدانوف کا یہ بیان’العربیہ ڈاٹ نیٹ‘ کی جانب سے روس، سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات کے درمیان تعلقات کی سطح کے بارے میں ان کےخیالات کے بارے میں پوچھے گئے ایک سوال کے جواب میں سامنے آیا۔

ترکیہ اور شام کے درمیان روسی ثالثی پر انہوں نے مزید کہا کہ ماسکو کو امید ہے کہ یہ دونوں ممالک کے درمیان تعلقات کو معمول پر لانے کا باعث بنے گا۔

بوگدانوف نے ’العربیہ ڈاٹ نیٹ‘ کے ساتھ ایک خصوصی انٹرویو میں کہا کہ شام میں امریکی موجودگی غیر قانونی ہے۔ واشنگٹن دہشت گردی سے نمٹنے کا بہانہ استعمال کر کے فرات کے مشرق میں شام کے اہم اقتصادی علاقوں پر قبضہ جمائے ہوئے ہے۔جنوبی شام میں التنف کا علاقہ امریکا کے لیے اس لیے اہم ہے کیونکہ اس میں تیل اور اہم قدرتی وسائل موجود ہیں۔

بوگدانوف نے مزید کہا کہ امریکی افواج کرد دھڑوں کی حمایت کرتی ہیں جو کہ شامی عرب جمہوریہ کی علاقائی سالمیت کی خلاف ورزی ہے۔

پناہ گزینوں کے معاملے پر مشرق وسطیٰ کے لیے پوتین کے خصوصی ایلچی نے کہا کہ مہاجرین کا مسئلہ ایک پیچیدہ مسئلہ ہے جس کے لیے بین الاقوامی کوششوں میں ہم آہنگی کی ضرورت ہے۔ یہ مسئلہ معاشی صورتحال سے جڑا ہوا ہے۔شام میں تباہ شدہ گھروں کی تعمیر نو کے لیے بھی بین الاقوامی امداد کی ضرورت ہے۔

شام کی عرب لیگ میں واپسی پر بوگدادوف نے کہا عرب لیگ کے جدہ اجلاس میں شام کے صدر بشار الاسد کی شرکت اہم اور مثبت تھی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں