بیجنگ اور واشنگٹن ایک سنگم پر کھڑے ہیں: چینی صدر کی کسنجر سے گفتگو

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

امریکا کے منجھے ہوئے سفارت کار اور سابق وزیرخارجہ ہنری کسنجر ان دنوں چین کے دورے پر ہیں جہاں انہوں نے چینی صدر شی جن پنگ سے ملاقات کی ہے۔

چین کے صدر شی جن پنگ نے جمعرات کو بیجنگ میں سابق امریکی وزیر خارجہ ہنری کسنجر سے ملاقات کی اور انہیں ایک پرانا دوست قرار دیا۔

کسنجر نے واشنگٹن اور بیجنگ کے درمیان ہم آہنگی کا مطالبہ کیا ہے کیونکہ اس وقت دونوں بڑی طاقتیں انسانی حقوق سے لے کر تجارت اور قومی سلامتی تک کئی معاملات پر اختلافات کا شکار ہیں۔

تاریخی کنورجنسی آرکیٹیکٹ

ہنری کسنجرجن کی عمر اب 100 سال ہوچکی ہے سنہ 1970ء کی دہائی میں بیجنگ اور واشنگٹن کے درمیان تاریخی میل جول کے معمار ہیں اور انہوں نے کئی سالوں سے چینی رہ نماؤں کے ساتھ قریبی تعلقات برقرار رکھے ہیں۔

چین کے سرکاری میڈیا کے مطابق چینی صدر نے جمعرات کو کسنجر سے کہا کہ "چینی عوام دوستی کی قدر کرتے ہیں۔ ہم اپنے پرانے دوست اور چین اور امریکا کے درمیان تعلقات کی ترقی اور چینی اور امریکی عوام کے درمیان دوستی کی حوصلہ افزائی کے لیے آپ کی تاریخی شراکت کو کبھی نہیں بھولیں گے۔

"دنیا بدل گئی"

انہوں نے مزید کہا کہ اس معاملے سے نہ صرف دونوں ممالک کو فائدہ ہوا بلکہ دنیا بھی بدل گئی۔

چینی صدر نے مزید کہا کہ 'دنیا اس وقت ایسی تبدیلیوں کا مشاہدہ کر رہی ہے جو ایک صدی میں نہیں دیکھی گئی۔ بین الاقوامی نظام میں زبردست تبدیلی آ رہی ہے'۔

چوراہا

انہوں نے مزید کہا کہ "چین اور امریکا ایک بار پھر ایک دوراہے پر ہیں اور دونوں فریقوں کو ایک بار پھر انتخاب کرنا ہوگا۔"

ہنری کسنجر نے شی کا شکریہ ادا کیا کہ انہوں نے دیایوتیائی اسٹیٹ گیسٹ ہاؤس کی بلڈنگ فائیو میں ان کی میزبانی کی جہاں 1971 میں ان کی ملاقات اس وقت کے وزیر اعظم ژاؤ این لائی سے ہوئی۔

سابق سفارت کار نے کہا کہ "ہمارے دونوں ممالک کے تعلقات دنیا میں امن اور ہمارے معاشروں کی ترقی میں مرکزی حیثیت رکھیں گے۔"

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں