اسلامی تعاون تنظیم کا قرآن کو نذرآتش کرنے کے واقعات پر مغربی ردِعمل پراظہارِمایوسی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

اسلامی تعاون تنظیم (او آئی سی) نے پیر کے روز سویڈن اور ڈنمارک کے قرآن مجید کو نذرآتش کرنے کے واقعات پر ردعمل پر’مایوسی‘ کا اظہار کیا ہے۔

جدہ میں قائم 57 رکن ممالک پر مشتمل تنظیم نے اس معاملے پر ایک غیر معمولی ورچوئل اجلاس منعقد کیا ہے۔تنظیم کے سیکرٹری جنرل حسین ابراہیم طہٰ نے افتتاحی سیشن سے خطاب میں دونوں نارڈک ممالک سے قرآن مجید کی بے حرمتی کو روکنے کا مطالبہ کیا اور اس بات پر مایوسی کا اظہار کیا کہ اس سلسلے میں سویڈن اور ڈنمارک کی جانب سے اب تک کوئی اقدامات نہیں کیے گئے ہیں۔

انھوں نے کہا کہ یہ بدقسمتی کی بات ہے کہ آزادیِ اظہار کا دعویٰ کرنے والے متعلقہ حکام بین الاقوامی قوانین کے برخلاف ایسی کارروائیوں کو دُہرانے کے کی اجازت دے رہے ہیں جن سے مذاہب کے احترام میں کمی واقع ہوتی ہے۔

جس وقت حسین طہٰ یہ تقریر کررہے تھے، اسٹاک ہوم میں مسلمانوں کی مقدس کتاب کی ایک اور تازہ واقعہ میں بے حرمتی کی گئی ہے اور دو افراد نے قرآن مجید کے نسخے کو آگ لگا دی۔

ان میں سے ایک سویڈن سے تعلق رکھنے والے عراقی پناہ گزین سلوان مومیکا تھا جس نے جون کے آخر میں اسٹاک ہوم کی مرکزی مسجد کے باہر قرآن مجید کے صفحات کو نذر آتش کیا تھا اور اس ماہ کے اوائل میں عراقی سفارت خانے کے باہر قرآن پاک کے نسخے پر پتھراؤ کیا تھا۔

ڈنمارک میں انتہائی دائیں بازو کے گروپ ڈانسکے پیٹریاٹر نے گذشتہ ہفتے ایک ویڈیو پوسٹ کی تھی جس میں ایک شخص کو قرآن پاک کی بے حرمتی کرتے،جلاتے اور عراقی پرچم کو کچلتے ہوئے دیکھا جا سکتا ہے۔

ان واقعات نے عراق میں بدامنی کو جنم دیا ہے، جہاں اس ماہ کے اوائل میں سیکڑوں مظاہرین نے سویڈش سفارت خانے پر دھاوا بول دیا تھا اور اس کو آگ لگا دی تھی۔

ڈنمارک کی پناہ گزین کونسل نے کہا ہے کہ عراق کے جنوبی شہر بصرہ میں واقع اس کے دفتر پر 'مسلح حملہ' کیا گیا۔خطے بھر کی حکومتوں نے بھی اپنے غم و غصے کا اظہار کیا ہے۔

عراق نے سویڈن کے سفیر کو ملک بدر کردیا ہے اور ایران نے کہا ہے کہ وہ سویڈن کے نئے سفیر کو ملک میں داخل ہونے کی اجازت نہیں دے گا۔

سعودی عرب نے حالیہ ہفتوں میں سویڈش اور ڈنمارک کے سفارت کاروں کو طلب کیا ہے اور قرآن کے خلاف "شرمناک" اقدامات کی مذمت میں احتجاجی نوٹ ان کے حوالے کیے ہیں۔

او آئی سی کے اجلاس سے قبل سویڈن اور ڈنمارک دونوں نے کشیدگی کو کم کرنے کی کوشش کی۔جمعرات کو حسین ابراہیم طہٰ کو سویڈن کے وزیر خارجہ ٹوبیاس بلسٹروم کی جانب سے ایک فون کال موصول ہوئی تھی جس میں انھوں نے کہا کہ اسٹاک ہوم قرآن کی توہین کےاقدامات کو مسترد کرتا ہے اور او آئی سی کے ارکان کے ساتھ اچھے تعلقات برقرار رکھنا چاہتا ہے۔

اتوار کے روز طہٰ کو ڈنمارک کے وزیر خارجہ لارس لوکے راسموسن کی بھی ایک فون کال موصول ہوئی جس میں انھوں نے قرآن مجید کی توہین کی مذمت کی اور کہا کہ ان کی حکومت اس مسئلے کا بڑی دل چسپی سے جائزہ لے رہی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں