سنکیانگ میں ایغوروں سےجبری مشقت کے خدشات؛ امریکا نے چینی کمپنیوں کو بلیک لسٹ کردیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

امریکا نے چین سے تعلق رکھنے والی مزید کمپنیوں کو اپنی بلیک لسٹ میں شامل کر لیا ہے اور ان کی مصنوعات کے ملک میں داخلے پر پابندی عاید کردی ہے جبکہ حکام تمام سپلائی چین سے جبری مزدوری کا خاتمہ چاہتے ہیں بالخصوص وہ ایغور(یغور) جیسی اقلیتوں سے امتیازی سلوک کا خاتمہ چاہتے ہیں۔

امریکی حکام کے مطابق بیٹری بنانے والی کمپنی کیمل گروپ اور مسالے تیار کرنے والی کمپنی چینگوانگ بائیوٹیک گروپ کو ایغور سے جبری مشقت کی روک تھام کے ایکٹ (یو ایف ایل پی اے) کی فہرست میں شامل کیا گیا ہے۔

ان کمپنیوں پر چین کی حکومت کے ساتھ مل کر جبری مشقت یا ایغور اقلیتوں جیسے ستم رسیدہ گروہوں کے ارکان کو سنکیانگ کے علاقے سے نکالنے کے علاوہ ان کی نقل و حمل پر پابندی یا ان سے جبری مشقت لینے کے الزامات عاید کیے گئے تھے۔

امریکا کی تجارتی نمائندہ کیتھرین تائی نے ایک بیان میں کہا کہ ممنوعہ فہرست میں چینی کمپنیوں کے اضافے سے جبری مشقت کے خاتمے کے لیے امریکا کے غیرمتزلزل عزم کا اظہار ہوتا ہے، جس میں اس بات کو یقینی بنانا بھی شامل ہے کہ جبری مشقت سے تیار کردہ سامان ہمارے ملک میں درآمد نہ کیا جائے۔

امریکی حکومت اور متعدد دیگر مغربی ممالک کے قانون سازوں نے چین کے شمال مغربی خطے سنکیانگ میں ایغور اقلیت کے ساتھ حکام کے سلوک کو 'نسل کشی' قرار دیا ہے۔

انسانی حقوق کی تنظیموں کا کہنا ہے کہ کم سے کم دس لاکھ افراد کو اس خطے میں قید کیا گیا ہے اورانھیں بڑے پیمانے پر زیادتیوں کا سامنا ہے۔ان میں خواتین کی جبری نس بندی اور ان سے جبری مشقت شامل ہے۔ان میں زیادہ تر افراد ایغور مسلم اقلیت کے ارکان ہیں۔

امریکا کی ہوم لینڈ سکیورٹی کے وزیر الیجینڈرو میئرکس نے منگل کے روز ایک علاحدہ بیان میں کہا:’’ہم اپنے تمام شراکت داروں کے ساتھ مل کر کام کرتے رہیں گے تاکہ سنکیانگ سے جبری مشقت سے بنی اشیاء کو امریکی تجارت سے باہر رکھا جاسکے اور قانونی تجارت کے بہاؤ کو آسان بنایا جا سکے‘‘۔

یو ایف ایل پی ایکٹ، جسے کانگریس نے 2021 میں دو طرفہ حمایت کے ساتھ منظور کیا تھا، سنکیانگ خطے سے تمام اشیاء کی درآمد پر پابندی عاید کرتا ہے جب تک کہ کمپنیاں یہ قابل تصدیق ثبوت پیش نہ کریں کہ ان کی مصنوعہ اشیاء کی تیاری میں جبری مشقت کا عنصر شامل نہیں ہے۔

قبل ازیں امریکا کی اس ممنوعہ فہرست میں چین کی دو اور کمپنیوں کو بھی اس سال کے اوائل میں شامل کیا گیا تھا۔ان میں ایک پرنٹر بنانے والی کمپنی نائن اسٹار کارپوریشن ہے اور دوسری کمپنی کیمیائی مصنوعات تیار کرنے والی سنکیانگ ژونگ تائی کیمیکل ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں