فوجی بغاوت پورے خطے کو تباہ کر دیے گی: واشنگٹن میں نیجر کے سفیر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

واشنگٹن میں نیجر کے سفیر نے جمعرات کو کہا کہ ملک اور وسیع خطہ کے ٹوٹنے سے پہلے نیجر کی حکومت کو "تصفیہ پر آنا" اور معزول صدر محمد بازوم کو اقتدار واپس کرنا چاہیے۔

فوجی بغاوت کے مرتکب افراد کی جانب سے ان کی معزولی کے اعلان کے چند گھنٹے بعد، واشنگٹن میں نائجر کے سفیر کیاری لیمان تینگیری نے ردعمل میں کہا کہ انہیں " ہوش میں آنا چاہیے۔"

جمعرات کو، سینئر سفارت کار نے "ایجنسی فرانس پریس" کو ایک بیان میں اپنے ملک میں جو کچھ ہو رہا ہے اس کے خطرات کے بارے میں تشویش کا اظہار کیا، اس بات پر زور دیتے ہوئے کہ بغاوت کی فوجی کونسل نائجر کو تباہی کی طرف دھکیل رہی ہے، جو پورے ساحل کو عدم استحکام کی حالت میں گھسیٹنے کا باعث بنے گی۔

ساحل ٹوٹ جائے گا

تینگیری نے اس بات پر بھی زور دیا کہ اگر نیجر ٹوٹ جاتا ہے تو ساحل کا پورا علاقہ تباہی اور عدم استحکام کا شکار ہو جائے گا، اس بات کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہ اس کے بعد افریقہ کے ساحلی ممالک اور مغربی ساحلی ممالک کے تحفظ کا کوئی راستہ نہیں ہے۔

انہوں نے یہ خدشہ بھی ظاہر کیا کہ روسی واگنر گروپ اس صورت حال سے فائدہ اٹھائے گا، یہ کہتے ہوئے کہ "وہاں واگنر اور انتہا پسند ہیں جو افریقہ کے ساحل سے لے کر بحیرہ روم تک کنٹرول کرتے ہیں۔"

لیبیا، وسطی افریقی جمہوریہ اور مالی میں تباہی اور جرائم کا حوالہ دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ وہ نہیں چاہتے تھے کہ'' ان کا ملک کرائے کے فوجیوں کے ہاتھوں میں جائے۔''

اگرچہ امریکی حکام کا کہنا ہے کہ ان کے پاس واگنر کے نائجر میں ہونے والے واقعات میں ملوث ہونے کا کوئی ثبوت نہیں ہے، لیکن انہیں خدشہ ہے کہ مالی میں مقیم یہ روسی نجی فوجی صورت حال سے فائدہ اٹھانے کی کوشش کر رہے ہیں۔

سینئر سفیر نے کہا کہ سابق صدر محمد بازوم اب بھی نائجر کے "جائز صدر" ہیں اور بغاوت کی کوشش کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ اس کی کوئی وجہ یا جواز نہیں ہے۔

ایک بیان کے ذریعے سفیروں کی خدمات کا خاتمہ

خیال رہے کہ نیجر میں فوجی بغاوت کے مرتکب افراد نے قومی ٹیلی ویژن پر پڑھے گئے ایک بیان میں، امریکہ، فرانس، نائیجیریا اور ٹوگو میں ان کے ملک کے سفارتی مشن کو "ختم کرنے" کا اعلان کر دیا ہے۔

بغاوت کے تباہ کن نتائج پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے، ان پابندیوں کے حوالے سے بھی بات کی جو اشیائے خوردونوش کی قیمتوں میں اضافہ کا باعث بن چکی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ نیجر، جو دنیا کے غریب ترین ممالک میں سے ایک ہے، زیادہ تر غیر ملکی امداد پر منحصر ہے، جو ملک کے بجٹ کا 40 فیصد ہے۔

مغربی افریقی ریاستوں کی اقتصادی برادری "اکواس" نے پہلے نائیجر پر پابندیاں عائد کی تھیں، بغاوت کی سازش کرنے والوں پر دباؤ ڈالنے کی کوشش میں، تاکہ وہ آئینی ترتیب کی طرف واپس آ جائیں، اور اس نے طاقت کے استعمال کو بھی مسترد نہیں کیا۔

فوجی کونسل کے ساتھ مذاکرات کی ناکامی کی صورت میں ان کا کہنا ہے کہ"طاقت کے استعمال کے سوا کوئی چارہ نہیں ہوگا،" چاہے "کوئی جنگ نہیں چاہتا"۔

واضح رہے کہ بدھ 26 جولائی کی شام کو فوج نے نیامے میں قومی ٹیلی ویژن پر "قومی کونسل برائے تحفظ وطن" کے نام سے ایک بیان میں منتخب صدر محمد بازوم کی حکومت کا تختہ الٹنے کا اعلان کیا۔ "

یورینیم سے مالا مال ملک نائجر 1960 میں اپنی آزادی کے بعد سے بغاوتوں سے بھرا پڑا ہے۔

یہ خطہ عدم استحکام کی حالت سے بھی واقف ہے، کیونکہ مالی اور برکینا فاسو کے بعد نیجر 2020 سے بغاوت کا مشاہدہ کرنے والا تیسرا ملک ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں