سعودی عرب میں خواتین کے لیے فلاحی کمپنی قائم، شہزادی ریما سربراہ ہوں گی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی عرب کی سرکاری نیوز ایجنسی ’’ایس پی اے‘‘ کے مطابق، مملکت کے پبلک انویسٹمنٹ فنڈ (پی آئی ایف) نے پیر کو خواتین پر مبنی صحت اور بہبود کی کمپنی کے قیام کا اعلان کیا جس کی سربراہ شہزادی ریما بنت بندر ہیں۔

"کیانی" کمپنی چھ پیشکشوں کے ذریعے خواتین کی صحت اور نوجوان خواتین کی آنے والی نسلوں کے طرز زندگی پر توجہ دے گی جس میں فٹنس، ملبوسات، ذاتی نگہداشت وعلاج، غذائیت اور تشخیص، صحت مند کھانا، اور سیکھنا شامل ہیں۔

سعودی خاتون جم میں ورزش کرتے ہوئے۔
سعودی خاتون جم میں ورزش کرتے ہوئے۔

یہ منفرد کمپنی ذہنی، جسمانی اور سماجی صحت کو ترجیح دیتے ہوئے اپنی تمام خدمات کے لیے خواتین پر مبنی نقطہ نظر اپنائے گی۔

پبلک انویسٹمنٹ فنڈ نے ایک بیان میں کہا کہ کمپنی سعودی عرب میں صحت اور تندرستی کی تیز رفتار ترقی کے لیے کام کرے گی اور نجی شعبے کی معاونت کرے گی۔

سعودی خواتین ریاض کے ایک ریسٹورانٹ میں محفل کے دوران۔
سعودی خواتین ریاض کے ایک ریسٹورانٹ میں محفل کے دوران۔

کیانی کا قیام پی آئی ایف کی حکمت عملی کا حصہ ہے جس میں امید افزا شعبوں کی صلاحیتوں کو کھولنا، ٹیکنالوجی کو مقامی بنانا، نجی شعبے کو فعال کرنا، مقامی معیشت کے تنوع کو آگے بڑھانا، اور سعودی ویژن 2030 کے مطابق زندگی کے معیار کو بڑھانے میں تعاون کرنا شامل ہے۔

بیان میں کہا گیا کہ کمپنی کا مقصد ایک ملین سے زائد صارفین تک پہنچنا ہے۔

ایس پی اے کے مطابق، آن لائن خدمات کے لیے ایک ڈیجیٹل پلیٹ فارم لانچ کیا جائے گا۔

پی آئی ایف میں مینا ڈائریکٹ انویسٹمنٹ کے سربراہ رائد اسماعیل نے کہا کہ "کیانی سعودی عرب کی 16 بلین ریال کی فٹنس اور فلاح و بہبود کی صنعت کو بڑھانے کے لیے کام کرے گی۔

پی آئی ایف کے لیے خواتین کی فٹنس، تندرستی اور فلاح و بہبود کے لیے یہ ایک بہت ہی دلچسپ وقت ہے، اور کیانی اپنی مربوط پیشکش کے ذریعے صنعت کو فعال کرنے کے لیے اچھی پوزیشن میں ہے۔"

خواتین کو بااختیار بنانا اور سعودی عرب کے شہریوں اور رہائشیوں کے معیار زندگی کو بہتر بنانا مملکت کے ویژن 2030 منصوبے کا حصہ ہیں۔ اقتصادی اصلاحات کے منصوبے کا مقصد ملک کو ایک صحت مند، خوش حال اور زیادہ مکمل قوم میں تبدیل کرنا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں