روس اور یوکرین

یوکرین ۔ روس مذاکرات کی میزبانی پر سعودی عرب کی عالمی سطح پر تحسین

مملکت دو متحارب ملکوں کےدرمیان بات چیت کے لیے 42 ممالک کو اکٹھا کرنے میں کامیاب

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
5 منٹس read

سعودی عرب کی میزبانی میں روس اور یوکرین کے درمیان جاری جنگ کے حوالے سے بات چیت کے بعد ہفتے کے روز یوکرین میں مستقل جنگ بندی کے لیے امریکا، چین ، بھارت سمیت 42 ممالک کے سینیر عہدیداروں کو اکٹھا کر کے ایک موثر بین الاقوامی ثالث ہونے میں اہم کردار ادا کیا ہے۔

یوکرین اور مغربی حامیوں نے روسی ۔ یوکریی جنگ کے خاتمے کے حالات کے پیچھے عالمی حمایت کو متحرک کرنے کی کوشش کے طور پر بات چیت کی پیش کش کی۔

امریکی اخبار ’وال اسٹریٹ جرنل‘ کے مطابق بہت سے بڑے اور ترقی پذیرممالک تنازع کے سلسلے میں غیر جانبدار رہے ہیں لیکن جدہ میں بات چیت کے خاتمے کے بعد سفارت کاروں نے کہا کہ بین الاقوامی قانون کے مرکزی اصول جیسے یوکرین کی خودمختاری اور اس کی علاقائی سالمیت کا احترام یوکرین اور روس کے مابین مستقبل کے امن مذاکرات کا مرکز ہونا چاہیئے۔

اس حوالے سے ذرائع نےاخبار کو بتایا کہ ایک ورکنگ گروپ بنانے پر اتفاق تھا جس نے جنگ کے عالمی اثر و رسوخ پر توجہ مرکوز کی تھی اور ایسا لگتا تھا کہ چین سمیت زیادہ تر شریک ممالک موجودہ انداز میں آنے والے ہفتوں میں دوبارہ ملنے کے لیے تیار ہیں تاہم روس اس میں شرکت نہیں کرے گا۔

جون میں کوپن ہیگن میں ابتدائی بات چیت کے بعد جدہ کی بات چیت ہوئی ، جب امریکی اور یورپی عہدیداروں نے تصدیق کی کہ بات چیت تنازع کو ختم کرنے کے لیے مذاکرات نہیں ہے۔ دونوں فریق تنازع کے حل کے لیے مخصوص شرائط عائد کرنے کی کوشش نہیں کریں گے۔

جدہ مذاکرات... یوکرین اور روس کے مابین امن سربراہی اجلاس کا پیش خیمہ
جدہ مذاکرات... یوکرین اور روس کے مابین امن سربراہی اجلاس کا پیش خیمہ

ہفتے کے روز اجلاس یوکرین،امریکا اور یورپ نے دنیا کے جنوب میں کیئف کی حمایت بڑھانے پر زور دیا۔

مغربی سفارت کاروں نے کہا کہ اس اجلاس کی میزبانی کے لیے سعودی عرب کے انتخاب کی وجوہات میں سے چین کو حصہ لینے پر راضی کرنے کی صلاحیت ہے۔ کیونکہ ریاض اور بیجنگ قریبی تعلقات برقرار رکھتے ہیں۔ایک سینیر امریکی عہدیدار نے کہا کہ سعودی عرب یوکرین پر سفارتکاری میں زیادہ سے زیادہ کردار ادا کرنے کی کوشش کر رہا ہے۔ ان کاکہنا تھا کہ سعودی عرب کی میزبانی پر بہت سے ممالک کو خوشی ہے۔ سعودی عرب کی عالمی ساکھ کی بہ دولت ریاض کی مساعی کو سراہا جا رہا ہے۔

کوپن ہیگن اور جدہ کے اجلاسوں کے درمیان سب سے بڑا فرق یہ تھا کہ جدہ میں ہفتے کے روز بات چیت میں شریک یا شامل ہونے والے ممالک کی تعداد سے دوگنا سے زیادہ ہے۔ اس میں یورپی ممالک ، جاپان ، جنوبی کوریا ، انڈونیشیا ، ترکیہ اور جنوبی افریقہ شامل تھے۔ اس سے بھی اہم بات یہ ہے کہ چین جسے کوپن ہیگن کے لیے مدعو کیا گیا تھا اور اس نے اس میں شرکت نہیں کی گئی ،اس نے جدہ کو ایک وفد بھیجا۔

مغربی سفارت کاروں نے کہا کہ بیجنگ نے مذاکرات میں عام طور پر تعمیری کردار ادا کیا اور سفارت کاروں نے کہا کہ چین روس کا سب سے اہم بیرونی حلیف ہے۔ مذاکرات میں بھی چین کا کردار فیصلہ کن سمجھا جائے گا۔

مذاکرات کے دوران چین نے 12 نکاتی جنگ بندی اور امن کے لیے جنگ بندی کا منصوبہ پیش کیا ، جس کا اعلان اس نے فروری میں پہلی بار کیا تھا۔ یورپی سفارتکاروں نے دباؤ ڈالنے کے لیے غیر مشروط جنگ بندی آسانی سے تنازع کو منجمد کرنے کا باعث بن سکتی ہے اور روس کو یوکرین سرزمین پر اس کے کنٹرول میں اضافہ کرنے کی اجازت دیتی ہے۔ بات چیت سے واقف ایک ذرائع نے کہا کہ "انہیں براہ راست ردعمل موصول ہوا، یہ ایک اچھی گفتگو تھی"۔

ایک سینیر امریکی عہدیدار نے بتایا کہ قومی سلامتی کے مشیر جیک سلیوان اور وزارت برائے امور خارجہ برائے سیاسی امور وکٹوریہ نولینڈ نے چینی وفد کے سربراہ سے ملاقات کے بعد سفارت کاروں نے کہا کہ کوپن ہیگن میں سامنے آنے شائع ہونے والے کچھ اختلافات بظاہر کم ہوگئے۔

جدہ میں یوکرین اور مرکزی غیر جانبدار ممالک اتفاق رائے کے حصول کے لیے زیادہ خواہش مند نظر آئے۔ ایک سینیر یورپی عہدیدار نے کہا کہ یوکرین نے اپنے امن منصوبے کو قبول کرنے کے لیے دوبارہ دباؤ نہیں ڈالا اور دوسرے ممالک نے اصرار نہیں کیا کہ کییف کو ترک کردیا جائے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں