ایران میں سعودی عرب کا سفارت خانہ سات سال کے بعد بحال؛دوبارہ کام شروع کردیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ایران کے دارالحکومت تہران میں سعودی عرب کے سفارت خانے نے سات سال کے بعد دوبارہ کام شروع کر دیا ہے۔

سعودی عرب اوراسلامی جمہوریہ ایران نے مارچ میں چین کی ثالثی میں طے شدہ معاہدے کے بعد سفارتی تعلقات بحال کرنے اور اپنے اپنے سفارت خانے دوبارہ کھولنے پر اتفاق کیا تھا۔

ایران کی سرکاری خبر رساں ایجنسی ایرنا نے ایران کی وزارتِ خارجہ کے ایک باخبرذرائع کے حوالے سے بتایا ہے کہ تہران میں سعودی عرب کے سفارت خانے نے باضابطہ طور پر اپنی سرگرمیاں شروع کر دی ہیں اور اتوار سے کام کر رہا ہے۔

تاہم الریاض کی جانب سے اس اقدام کی کوئی سرکاری تصدیق نہیں کی گئی ہے۔قبل ازیں جون میں ایران نے الریاض میں اپنے سفارت خانے کو دوبارہ کھولنے کے موقع پر پرچم کشائی کی تقریب منعقد کی تھی۔

اس سے قبل ایرانی میڈیا نے سعودی سفارت خانے کو دوبارہ کھولنے میں تاخیر کی وجہ اس عمارت کی خراب حالت کو قراردیا تھا اور اسے 2016 کے مظاہروں کے دوران نقصان پہنچا تھا۔

اطلاعات میں کہا گیا ہے کہ سعودی سفارت کار کام کی تکمیل تک ایرانی دارالحکومت کے ایک لگژری ہوٹل میں کام کریں گے۔

مارچ کے معاہدے کے بعد سے سعودی عرب نے شام کے ساتھ بھی تعلقات بحال کیے ہیں اوریمن میں امن کے لیے کوششیں تیز کر دی ہیں، جہاں وہ کئی سال سے ایران کے حمایت یافتہ حوثی باغیوں کے خلاف فوجی اتحاد کی قیادت کر رہا ہے۔حالیہ مہینوں میں ایران کے سعودی عرب اور کویت کے ساتھ ایک متنازع گیس فیلڈ کی ملکیت پر اختلافات پیدا ہوئے ہیں۔

سعودی عرب اورکویت الدرہ گیس فیلڈ پر’’ملکیت‘‘ کے دعوے دار ہیں۔ایران نے خبردارکیاہےکہ اگرمذاکرات ناکام ہوئے تو وہ آف شورزون پر ’’اپنے حق کی پیروی‘‘کرے گا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں