فلسطینی علاقوں کو مقبوضہ کہنے کا آسٹریلیا کا فیصلہ خوش آئند ہے: عرب پارلیمنٹ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

انہوں نے بغیر کسی تاخیر یا ہچکچاہٹ کے فلسطینی ریاست کو باضابطہ طور پر تسلیم کرتے ہوئے اس فیصلے کو ختم کرنے کا مطالبہ کیا۔

عرب پارلیمنٹ نے آسٹریلیا کے فلسطینی علاقوں کو "مقبوضہ" اور اسرائیلی بستیوں کو "ناجائز" ماننے کے فیصلے کا خیرمقدم کیا ہے۔ اس کا اظہار آسٹریلیا کے وزیر خارجہ پینی وونگ نے آسٹریلوی پارلیمنٹ کے سامنے کیا۔ انہوں نے بتایا کہ ان کی حکومت سرکاری طور پر اپنے تمام لٹریچر میں "مقبوضہ فلسطین" کی اصطلاح استعمال کرنا شروع کر دے گی۔ مشرقی القدس کو بھی مقبوضہ علاقہ کہا جائے گا۔

عرب پارلیمنٹ نے اس فیصلے کو آسٹریلوی موقف میں ایک اہم پیش رفت قرار دیا جو بین الاقوامی قانون اور اقوام متحدہ کی قراردادوں کے لیے پرعزم ہے۔ عرب پارلیمنٹ بین الاقوامی امن کے حوالے سے امن کے عمل کو بحال کرنے کے لیے بین الاقوامی کوششوں کی حمایت کرتی ہے۔ ان کوششوں میں سب سے اہم دو ریاستی حل کا اصول ہے۔

عرب لیگ کے زیر تحت عرب پارلیمنٹ نے آسٹریلیا سے مطالبہ کیا کہ وہ بین الاقوامی قانون اور بین الاقوامی قانونی جواز کے مطابق بغیر کسی تاخیر یا ہچکچاہٹ کے سرکاری طور پر فلسطینی ریاست کو تسلیم کرے اور فلسطینی عوام کے منصفانہ اور جائز حقوق کے ساتھ کھڑا ہو جائے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں