ٹرمپ کے حامیوں نے ججوں کیخلاف مہم شروع کردی، قتل کی دھمکی بھی دے ڈالی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

اپنے خلاف قانونی الزامات اور مقدمات کی سماعت کے آغاز کے بعد سے سابق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے امریک میں عدلیہ کو تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔ خاص طور پر کچھ ججوں پر جن پر وہ متعصب اور ڈیموکریٹک پارٹی کے ماتحت ہونے کا الزام لگاتے آ رہے ہیں۔

تاہم حالیہ عرصے میں ان کے بیانات زیادہ شدید ہو گئے ہیں۔ خاص طور پر جب ان پر اور ان کے درجنوں ساتھیوں پر ریاست جارجیا میں انتخابی نتائج کو بدلنے کی کوشش کا الزام لگایا گیا ہے۔

ٹرمپ نے سوشل میڈیا پلیٹ فارم ’’ ٹروتھ‘‘ پر الزام تراشی کی تو ان کے حامیوں نے بھی بعض ججوں اور پراسیکیورز پر بد سلوکی کا الزام عائد کرنا شروع کردیا ہے۔

ٹرمپ کے مقدمہ کی سماعت کرنے والی خاتون جج چٹکن
ٹرمپ کے مقدمہ کی سماعت کرنے والی خاتون جج چٹکن

امریکی حکام نے ٹیکساس کی ایک خاتون کو مبینہ طور پر ایک سیاہ فام وفاقی جج کے خلاف نسلی طور پر موت کی دھمکیاں دینے کے الزام میں گرفتار کرلیا۔ یہ جج سابق امریکی صدر کے 2020 کے صدارتی انتخابات کے نتائج کو الٹانے کی سازش کرنے کی کوشش کے مقدمے کی نگرانی کرے گا۔

ٹیکساس کی ابیگیل جو چیری پر ٹرمپ کے مقدمے کی نگرانی کرنے والی واشنگٹن کی وفاقی جج تانیا چٹکن کو قتل کرنے کی دھمکی دینے کا الزام ہے۔ اس خاتون نے انتخابی مداخلت کے الزام میں ٹرمپ کے مواخذے کے دو دن بعد 5 اگست کو جج چٹکن کے کمرے میں اس پر حملہ کرتے ہوئے ایک آڈیو پیغام چھوڑا۔ چند روز قبل سامنے آنے والی ایک شکایت کے مطابق اس پر نسلی گالیاں دینے کا بھی الزام لگایا گیا تھا۔

چیری نے چٹکن سے کہا اگر ٹرمپ 2024 میں منتخب نہیں ہوئے تو ہم آپ کو مارنے آرہے ہیں۔ چٹکن نے جج کو گالی بھی دی۔ 43 سالہ خاتون چیری نے مزید کہا آپ کو ذاتی طور پر اور آپ کے خاندان کے ساتھ عوامی طور پر نشانہ بنایا جائے گا۔۔ اس نے ٹیکساس سے سیاہ فام ڈیموکریٹک کانگریس وومن شیلا جیکسن لی کے خلاف بھی دھمکی دی۔

خاتون جج چٹکن ٹرمپ کے مقدمے کی صدارت کریں گی ۔ 61 سالہ جج واشنگٹن کی فیڈرل ڈسٹرکٹ کورٹ کے تقریباً ایک درجن ججوں میں سے ایک یہں جنہیں کیس کی سماعت کے لیے مقرر کیا گیا تھا۔ انہیں قوانین کا اطلاق کرنے میں بھی سخت سمجھا جاتا ہے۔

جج چٹکن نے ٹرمپ کے مقدمہ کی پہلے بھی سماعت کی ہے۔ انہوں نے نومبر 2021 میں ایک کیس میں ٹرمپ کے خلاف فیصلہ سنایا تھا جس کے دوران اس نے کہا کہ صدر بادشاہ نہیں ہوتے۔

خاتون جج نے ٹرمپ کے حامیوں کے خلاف طویل سزائیں بھی جاری کی ہیں۔ یہ وہ افراد ہیں جنہوں نے 6 جنوری 2021 کو کانگریس کی عمارت پر حملہ کرنے میں حصہ لیا تھا۔

فینی ولس ریاست جارجیا کی فلٹن کاؤنٹی ڈسٹرکٹ اٹارنی ہیں۔ جارجیا مبں سابق صدر اور 18 دیگر اتحادیوں کے خلاف 2020 کے انتخابات کو الٹانے کی کوششوں پر مقدمہ چلایا جا رہا ہے۔ فینی ولس کو بھی آن لائن نسل پرستانہ بدسلوکی کی لہر کا نشانہ بنایا گیا ہے۔ ٹرمپ کے حامیوں اور کچھ انتہائی دائیں بازو کے گروہوں کی کالیں تشدد اور پھانسی کے پھندے تک کے الفاظ تک پہنچ گئی ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں