چین اور امریکا کے درمیان مصنوعی ذہانت کے عسکری استعمال کے میدان میں مقابلہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

مصنوعی ذہانت کی ٹیکنالوجی میں حالیہ پیش رفتوں سے ریاست ہائے متحدہ امریکا اور چین کے درمیان فوجوں میں اس نئی ٹیکنالوجی کو مربوط کرنے اور اس سے فائدہ اٹھانے کی ایک نئی دوڑ شروع ہوگئی ہے۔

"وال اسٹریٹ جرنل" میں شائع ہونے والی ایک رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ دونوں فریقوں کی ترجیحات میں ایسے ہتھیاروں کی تیاری شامل ہے جو انسانی مداخلت کے بغیر ہدف تک اپنا راستہ تلاش کر سکتے ہیں۔ امریکا اور چین دونوں مصنوعی ذہانت پر مبنی ڈیوائسز تیار کررہےہیں جو سیٹلائٹ کی تصاویر سے اہداف کی نشاندہی کرنے کی صلاحیت رکھتی ہیں۔

چینی میڈیا کے مطاب ق چائنا نیشنل یونیورسٹی آف ڈیفنس ٹیکنالوجی کے حالیہ تجربات میں ایک تجربہ کیا گیا جس میں درجنوں ڈرونز کے جھنڈ نے جیمنگ ٹیسٹ سگنلز کو کنٹرول کرلیا۔

امریکا نے اپریل میں برطانیہ اور آسٹریلیا کے ساتھ مشترکہ مشقیں کیں تاکہ زمینی گاڑیوں جیسے ٹینکوں، خود سے چلنے والی بندوقوں اور بکتر بند گاڑیوں پر حملوں کو ٹریک کرنے اور ان کی نقل کرنے کے لیے آرٹیفیشل انٹیلی جنس سے چلنے والے ڈرونز کا استعمال کیا جا سکے۔

اخبار کے مطابق منتظمین نے کہا کہ انہوں نے AI پر مبنی رہ نمائی سافٹ ویئر کو اپ ڈیٹ بھیج کر پرواز میں پریڈ کو ری ڈائریکٹ کیا۔

واشنگٹن ڈی سی میں جارج ٹاؤن یونیورسٹی میں سینٹر فار سکیورٹی اینڈ ایمرجنگ ٹیکنالوجی کے ذریعے سیکڑوں مصنوعی ذہانت سے متعلق فوجی خریداری کے ریکارڈز کے حالیہ مطالعے سے پتہ چلا ہے کہ آٹھ ماہ کی مدت کے دوران امریکا اور چین کے تمام معروف معاہدوں کا تقریباً ایک تہائی 2020 کو سمارٹ اور خود چلانے والی گاڑیوں کے لیے وقف کیا گیا تھا۔ یہ دونوں ممالک میں خریداری کے سب سے بڑے حصے کی نمائندگی کرتا ہے۔

ایسا لگتا ہے کہ یوکرین میں جاری جنگ کے دوران ڈرون کے وسیع پیمانے پر استعمال نے مصنوعی ذہانت سے چلنے والی ڈرون ٹیکنالوجی کی حقیقی جانچ پر عمل کرنے کا موقع فراہم کیا۔

سینٹر فار سکیورٹی اینڈ ایمرجنگ ٹیکنالوجی کی طرف سے کی جانے والی اس تحقیق میں پتا چلا ہے کہ دونوں ممالک میں خریداری کے معاہدوں میں انٹیلی جنس، نگرانی اور جاسوسی کے لیے ’اے آئی‘ ٹولز کا دوسرا بڑا حصہ ہے۔ اس میں ممکنہ اہداف کو تلاش کرنے کے لیے مصنوعی ذہانت کا استعمال سیٹلائٹ کی تصویروں کا تجزیہ کرنا شامل ہے۔ سینٹرنے اندازہ لگایا ہے کہ امریکا اور چین ہر ایک ملٹری ریسرچ اور مصنوعی ذہانت کی ترقی پر اربوں ڈالر خرچ کرتے ہیں۔

وال اسٹریٹ جرنل کی رپورٹ کے مطابق مصنوعی ذہانت میں حالیہ پیش رفت نے فوجی میدان میں اس کے استعمال کی توقعات کو ہوا دی ہے اور اس خدشے کا باعث بنی ہے کہ امریکا چین کے پیچھے پڑ سکتا ہے۔

سنہ 2021 ءمیں چینی فوجی اشاعتوں نے حکام کو جنگ کے بارے میں ایک نقطہ نظر پر تبادلہ خیال کرتے ہوئے دکھایا جس میں امریکی کمزوریوں کی نشاندہی کرنے میں مدد کے لیے بڑے ڈیٹا اور مصنوعی ذہانت میں پیش رفت کو مدنظر رکھنا اور پھر درست حملے کرنے کے لیے اپنی فوج کی تمام شاخوں کو استعمال کرنا شامل ہے۔

پینٹاگان نے اس مہینے کے شروع میں ایک ٹیم کا اجلاس منعقد کیا تاکہ بڑے لینگویج ماڈلز جیسے جنریٹیو AI ٹولز کے استعمال کودیکھا جا سکے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں