امریکا کی بدنام زمانہ جیل میں ٹرمپ کی میزبانی، ٹرمپ کی اٹارنی جنرل پر شدید تنقید

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

سابق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ جیل جانے کے لیے تیار ہوگئے ہیں۔ڈونلڈ ٹرمپ نے اگلے جمعرات کو امریکی ریاست جارجیا کی بدنام زمانہ فلٹن جیل میں جانےپر رضامندی ظاہر کی ہے، ان پر انتخابات میں مداخلت اور ان کے نتائج کو تبدیل کرنے کی کوشش کا الزام عائد کیا گیا تھا۔

ایسا لگتا ہے کہ یہ جیل کاؤنٹی میں بالکل بھی غیرموزوں ہے، کیونکہ اس کی شہرت کافی حد تک بری ہے۔ اس میں قیدیوں اور کیڑے مکوڑوں کی بھی بھر مار ہے۔

غیر معمولی ملزم؟!

مقامی میڈیا کے مطابق سدرن سینٹر فار ہیومن رائٹس کے ریکارڈ کے مطابق، پچھلے سال ستمبر میں زیادہ تر قیدیوں کو جوؤں، خارش یا دونوں کا سامنا کرنا پڑا، مقامی میڈیا کے مطابق اس جیل میں قیدیوں کو دیگر شکایات کے علاوہ "خوراک کی کمی" کا بھی سامنا رہا ہے۔

توقع ہے کہ ٹرمپ اس فلٹن جیل میں پہنچیں گے جہاں ان کی تلاشی لی جائے گی اور ممکنہ طور پر تصویریں اور انگلیوں کے نشانات لیے جائیں گے۔

رہائی کی شرائط

اگرچہ ٹرمپ کی خوش قسمتی سے کہ وہ صرف چند گھنٹے وہاں گزاریں گے،اگر فلٹن کاؤنٹی سپیریئر کورٹ کے جج سکاٹ میکافی انہیں دو لاکھ ڈالر کی ضمانت پر رہا کرسکتے ہیں۔

سابق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ
سابق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ

استغاثہ اور ٹرمپ کے وکلاء کی طرف سے منظور شدہ معاہدے کے حصے کے طور پر ان پر اضافی شرائط بھی عائد کیں۔

اس میں تین صفحات پر مشتمل میمورنڈم میں کہا گیا ہے کہ "مدعا علیہ کسی ایسے شخص کو ڈرانے دھمکانے کے لیے کوئی کارروائی نہیں کر سکتا ہے جسے وہ اس مقدمے میں مدعا علیہ یا گواہ کے طور پر جانتا ہے یا کسی بھی طرح سے انصاف کی انتظامیہ میں رکاوٹ ڈال سکتا ہے۔"

میمو کے مطابق اس میں شامل ہےیہ صرف سوشل میڈیا پر پوسٹس یا کسی اور کی طرف سے کی گئی پوسٹس کو دوبارہ پوسٹ کرنے تک محدود نہیں ہے۔


پراسکیوٹر پر تنقید

معاہدے کے باوجود ری پبلیکن لیڈر تنقید سے باز نہیں آئے۔

ٹرمپ کا تبصرہ
ٹرمپ کا تبصرہ

انہوں نے کل شام اپنے صداقت کے حق میں سوشل اکاؤنٹ پر ایک ٹویٹ میں پوچھا کہ کیا یہ مقدمہ قابل اعتبار تھا۔

"کیا آپ اس پر یقین کر سکتے ہیں؟ میں جمعرات کو اٹلانٹا، جارجیا جا رہا ہوں جہاں پر ریڈیکل لیفٹ کے ڈسٹرکٹ اٹارنی فینی وِلیس جو کہ دنیا کے سب سے بڑے ہاٹ سپاٹ کی نگرانی کرتی ہیں، کے ہاتھوں گرفتار ہونے جا رہا ہوں،" انہوں نے اپنے حامیوں کو مخاطب کرتے ہوئے لکھا

امریکی تاریخ میں قتل و غارت اور پرتشدد جرم

انہوں نے کہا کہ "عدلیہ کے سامنے ان کی پیشی کسی قتل کی وجہ سے نہیں، بلکہ ایک درست فون کال کرنے کی وجہ سے تھی!"۔

انہوں نے ریپبلک پراسیکیوٹر کے خلاف اپنے الزامات کو دہراتے ہوئے کہا کہ "جو بائیڈن کی وزارت انصاف کے ساتھ سخت ہم آہنگی میں اس پر رقم اکٹھی کر رہی ہے۔"

جارجیا کے اٹارنی جنرل فینی ولس (رائٹرز)
جارجیا کے اٹارنی جنرل فینی ولس (رائٹرز)

قابل ذکر ہے کہ فلٹن کورٹ کے پراسیکیوٹر فینی ولس نے جج سے انتخابی دھاندلی کے الزام میں 77 سالہ سابق صدر کے خلاف مقدمے کی سماعت کے لیے اگلے سال 4 مارچ کی تاریخ مقرر کرنے کو کہا تھا۔

جبکہ ٹرمپ اور دیگر مدعا علیہان کے لیے رضاکارانہ طور پر ہتھیار ڈالنے کی آخری تاریخ 25 اگست مقرر کی گئی تھی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں