امریکی ہیلی کاپٹر کا راستہ روکنے کے ایرانی دعوے ’بے بنیاد‘: پینٹاگان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

پینٹاگان کے ایک اہلکار نے پیر کو بتایا کہ ایرانی بحریہ کے دعوؤں اور تہران کی مبینہ ویڈیو کے باوجود ایران نے گذشتہ ہفتے کسی بھی امریکی طیارے کو نہیں روکا۔

پینٹاگان کی ڈپٹی پریس سکریٹری سبرینا سنگھ نے نامہ نگاروں کو بتایا کہ "امریکی ہیلی کاپٹر کے راستے میں کسی قسم کی مداخلت کی خبریں درست نہیں ہیں۔"

ایران نے ایک ویڈیو شائع کی جس میں آبنائے ہرمز میں امریکی بحریہ کے ایک جہاز کی نگرانی کی فوٹیج دکھائی گئی۔ ایک ہیلی کاپٹر بھی اترتا ہوا نظر آیا لیکن العربیہ آزادانہ طور پر اس کی صداقت کی تصدیق نہیں کر سکا۔

تہران نے اعلانیہ طور پر امریکہ کو خبردار کیا کہ وہ جنگی بحری جہازوں اور لڑاکا طیاروں کے ساتھ مشرق وسطیٰ میں 3000 امریکی فوجیوں کی تعیناتی کے بعد کسی بھی امریکی اشتعال انگیزی کا جواب دے گا۔

سنگھ نے مزید کہا۔ "ہم نے [ایران کی طرف] سے پہلے بھی یہ بات دیکھی ہے۔ مجھے نہیں معلوم کہ آیا یہ پروپیگنڈا ہے لیکن یہ بیانات جھوٹے ہیں۔ یہ بات بالکل درست نہیں ہےَ۔"

امریکہ نے حالیہ مہینوں میں ایرانی اور روسی دھمکیوں کے جواب میں اس ماہ کے شروع میں خطے میں اضافی فوجیوں اور جنگی اثاثوں کو تعینات کیا تھا جو پہلے سے اعلان کردہ تعیناتی کا حصہ تھا۔

گذشتہ ماہ امریکی سکریٹری دفاع لائیڈ آسٹن نے خطے میں ایمفیبیئس ریڈی نیس گروپ/میرین ایکسپیڈیشنری یونٹ (اے آر جی/ایم ای یو) کی تعیناتی کا حکم دیا۔ یہ تعیناتی ایف-35، ایف-16، اور ایک گائیڈڈ میزائل شکن امریکی تھامس ہنڈر (ڈی جی جی-116) کے علاوہ تھی جسے روانہ کیا گیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں