بھارتی خلائی مشن چندریان-تھری کی چاند پر اترنے کی دوسری کوشش!

اس مشن سے قبل صرف روس، امریکہ اور چین نے چاند کی سطح پر کنٹرول لینڈنگ حاصل کی تھی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

بھارت کا تاریخی خلائی مشن چندریان- تھری چاند پر اترنے کے قریب ہے جہاں عالمی طاقتوں کی خلائی مشن کی دوڑ میں بھارت بھی تیزی سے آگے بڑھ رہا ہے۔

غیرملکی خبر رساں ایجنسی ’اے ایف پی‘ کے مطابق چاند پر اترنے کی کوشش بھارت کے لیے ایک تاریخی لمحہ ہے، کیونکہ یہ عالمی خلائی طاقتوں کی طرف سے طے کیے گئے سنگ میلوں کو تیزی سے پورا کر رہا ہے۔

بھارت کی طرف سے چندریان تھری نامی خلائی جہاز گزشتہ ماہ چاند پر روانہ کیا گیا تھا، چندریان لفظ کا مطلب سنسکرت زبان میں ’مون کرافٹ‘ ہے جو کہ بھارتی وقت کے مطابق آج شام 6 بجے جنوبی قطب کے قریب پہنچنے والا ہے۔

بھارتی نشریاتی ادارے ’ٹائمز آف انڈیا‘ کی آج صفحہ اول پر بھی یہ سرخی شائع ہے کہ ’بھارت چاند پر پہنچ گیا۔‘

ایک اور نشریاتی ادارے ’ہندوستان ٹائمز‘ نے لکھا کہ ’یہ چاند مشن کے لیے ڈی ڈے ہے‘۔

خیال رہے کہ بھارت کی طرف سے 2019 میں بھی چاند پر خلائی جہاز بھیجنے کی کوشش کی گئی تھی جو کہ ناکام ہوئی جبکہ حالیہ کوشش تقریباً 50 برسوں میں روس کا پہلا چاند مشن چاند کی سطح پر گر کر تباہ ہونے کے چند دن بعد ہوئی ہے۔

لیکن سابق بھارتی خلائی مشن کے سربراہ کے سیون نے کہا کہ لینڈر کے ذریعہ وطن واپس بھیجی گئی تازہ ترین تصاویر نے اشارہ دیا ہے کہ سفر آخری مراحل تک کامیاب ہوگا۔

انہوں نے بتایا کہ اس سے کچھ حوصلہ ملتا ہے کہ ہم لینڈنگ مشن کو بغیر کسی پریشانی کے حاصل کر سکیں گے۔

خلائی مشن کے سربراہ کے سیون نے مزید کہا کہ انڈین اسپیس ریسرچ آرگنائزیشن (اسرو) نے چار سال پہلے کی ناکامی کے بعد اصلاح کی ہے۔

انہوں نے کہا چندریان 3 مزید سختی کے ساتھ جانے والا ہے، ہمیں اعتماد ہے، اور امید کرتے ہیں کہ سب کچھ آسانی سے ہوگا۔

واضح رہے کہ بھارت کی طرف سے یہ مشن تقریباً چھ ہفتے قبل ہزاروں افراد کے سامنے شروع کیا گیا تھا، لیکن چاند تک پہنچنے میں 1960 اور 1970 کی دہائی کے اپالو مشنوں کے مقابلے میں زیادہ وقت لگا، جو کہ چند ہی دنوں میں پہنچے تھے۔

بھارت ان راکٹس کا استعمال کر رہا ہے جن کا استعمال اس وقت امریکا نے کیا تھا، اس کا مطلب ہے کہ تحقیقات کو اپنے ماہانہ قمری راستے پر جانے سے قبل رفتار حاصل کرنے کے لیے کئی بار زمین کا چکر لگانا چاہیے۔

خلائی جہاز کا لینڈر، وکرم، جس کا سنسکرت میں مطلب ’بہادری‘ہے، وہ گذشتہ ہفتے اپنے پروپلشن ماڈیول سے الگ ہو گیا تھا اور پانچ اگست کو قمری مدار میں داخل ہونے کے بعد سے چاند کی سطح کی تصاویر واپس بھیج رہا ہے۔

لینڈنگ سے ایک دن قبل اسرو نے سوشل میڈیا پر کہا کہ لینڈنگ شیڈول کے مطابق ہو رہی ہے اور مشن کنٹرول کمپلیکس توانائی اور جوش سے گونج رہا ہے۔

ہندوستان کے پاس نسبتاً کم بجٹ والا ایرو اسپیس پروگرام ہے، لیکن 2008 میں چاند کے گرد چکر لگانے کے لیے پہلی بار تحقیقات بھیجنے کے بعد سے سائز اور رفتار میں کافی اضافہ ہوا ہے۔

بھارت کے حالیہ مشن کی لاگت 74.6 ملین ڈالر ہے جو کہ دوسرے ممالک کے مقابلے میں بہت کم ہے۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ بھارت ہنر مند انجنیئرز کی بدولت موجودہ خلائی ٹیکنالوجی کی نقل اور موافقت کرکے لاگت کو کم کر سکتا ہے۔

2014 میں بھارت مریخ کے گرد مدار میں سیٹلائٹ لگانے والا پہلا ایشیائی ملک بن گیا تھا اور اگلے سال تک زمین کے مدار میں تین روزہ انسان بردار مشن شروع کیا۔

اسرو کے سابق سربراہ نے کہا کہ بھارت کی نسبتاً غیر نقشہ شدہ قمری جنوبی قطب کو تلاش کرنے کی کوششیں سائنسی علم میں بہت اہم حصہ ڈالیں گی۔

اس سے قبل صرف روس، امریکا اور چین نے چاند کی سطح پر کنٹرول لینڈنگ حاصل کی تھی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں