بھارتی روبوٹ نے چاند کے قطب جنوبی میں اپنا سرچ مشن شروع کردیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

بھارت کے خلائی تحقیقاتی روبوٹ کی چاند پر لینڈنگ کے بعد اس روبوٹ نے چاند کے قطب جنوبی میں اپنی تحقیقات کا آغاز کردیا ہے۔
خیال رہے کہ بھارت کا چاند پر بھیجا گیا روبوٹ ’چندریان تھری‘ غیر دریافت شدہ قطب جنوبی کے قریب نیچے اتارا تھا۔ زمین سے بھیجے گئے کسی سائنسی مشن کی چاند کے اس حصے میں پہلی لینڈنگ ہے۔

موبائل روبوٹ 'پرگیان' گاڑی سے کچھ گھنٹوں کے بعد اتر گیا۔ دوسری طرف بھارت میں اس مشن کی کامیابی سے لینڈنگ پر جشن منایا گیا۔

انڈین اسپیس ریسرچ آرگنائزیشن نے جمعرات کو "X" پلیٹ فارم (سابقہ ٹویٹر) پر اعلان کیا کہ "موبائل روبوٹ گاڑی سے اترا اور ہندوستان نے چاند کی سیر کی!"

چھ پہیوں والا شمسی توانائی سے چلنے والا یہ روبوٹ اپنے دو ہفتے کے مشن کے دوران نسبتاً نامعلوم علاقے میں گھومے گا اور تصاویر اور سائنسی ڈیٹا اکٹھا کرے گا۔

اسی علاقے میں ایک روسی خلائی جہاز کے گر کر تباہ ہونے کے چند دن بعد بدھ کو چندریان 3 کامیابی کے ساتھ اترا۔

چار سال قبل بھارت کا چاند پر بھیجا گیا مشن ناکام ہوگیا تھا۔ اس ناکامی کواس وقت ہندوستان کے خلائی پروگرام کے لیے ایک بہت بڑا دھچکا سمجھا جاتا تھا۔

لیکن ہندوستان خلاء کے میدان میں ترقی یافتہ ممالک کی کامیابیوں کے برابر کامیابیاں حاصل کر رہا ہے۔

چندریان 3 نے تقریباً چھ ہفتے قبل ہزاروں ناظرین کے سامنے لانچ ہونے کے بعد سے بہت زیادہ توجہ حاصل کی ہے۔

وزیر اعظم نریندر مودی نے بدھ کو کہا کہ چاند پر خلائی جہاز کی کامیاب لینڈنگ انڈیا کے لیے ایک اعزاز ہے۔اس سے قبل صرف امریکا، چین اور روس نے چاند پر اپنے مشن کامیابی سے اتارے تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں