برطانوی ہائی کمشنرجین میریٹ کی مولانامحمدعبدالخبیرآزادسےبادشاہی مسجدلاہورمیں ملاقات

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

بادشاہی مسجد لاہور میں برطانوی ہائی کمشنر جین میریٹ کی آمد پر مولانا سید محمد عبدالخبیر آزاد چیئرمین مرکزی رؤیت ہلال کمیٹی پاکستان /خطیب و امام بادشاہی مسجد لاہور /چیئرمین انٹرفیتھ کونسل فار پیس اینڈ ہارمنی پاکستان نے ان کو خوش آمدید کہا اور بادشاہی مسجد لاہور کی تاریخی اہمیت اور پس منظر پر روشنی ڈالی-

بعد ازاں مولانا سید محمد عبدالخبیر آزاد سے ملاقات اور باہمی دلچسپی کے امور پر تبادلہ خیال کیا گیا جس میں حالیہ سانحہ جڑانوالہ پر بات کی گئی-

مولانا سید محمد عبدالخبیر آزاد اورعلماء کرام و دیگر مذاہب عالم کے راہنماؤں کے کردار کو جو سانحہ جڑانوالہ کے حوالے سے پیش کیا گیا-

برٹش ہائی کمشنر نے اس اقدام کو سرہاتے ہوئے کہا کہ آپ کی اس لیڈر شپ اور علماء کرام نے جو اپنا کردار ادا کیا وہ قابل تحسین ہے-

اس موقع پر مولانا آزاد نے کہا کہ اسلام اقلیتوں کے حقوق کے تحفظ کو یقینی بنانے کی بات کرتا ہے اور آئین پاکستان اقلیتوں کے تحفظ کا ضامن ہے،پاکستان ایک ریاست اور سٹیٹ ہے کسی کو سزا و جزا دینا سٹیٹ کی ذمہ داری ہے-

مولانا آزاد نے اس واقعہ کی مذمت کرتے ہوئے کہاکہ ہماری حکومت،افواج پاکستان اور پوری قوم کا یہ عزم ہے کہ آئندہ ایسے واقعات ملک میں رونما نہیں ہونے دیں گے بلکہ اس کے اوپر ایک مؤثر حکمت عملی طے کی جارہی ہے اور مولانا آزاد نے برٹش ہائی کمشنرکو یہ یقین دلایا کہ تمام ہمدردیاں اور تعاون اقلیتی برادریاں جو پاکستان میں رہتی ہیں ان کے ساتھ ہیں-

مولانا آزاد نے اس موقع پر وزیر اعظم پاکستان انوار الحق کاکڑ اور وزیر اعلیٰ پنجاب محسن نقوی کی خدمات کو بھی سراہا جو انھوں نے سانحہ جڑانوالہ کے لوگوں کے مکانات اور چرچوں کو جلد بنانے کیلئے اقدامات کیے وہ لائق تحسین ہیں-

اس موقع پر مولانا سید محمد عبدالخبیر آزاد نے پاکستان کا عظیم بیانیہ پیغام پاکستان بھی برٹش ہائی کمشنرجین میریٹ کو پیش کیا جس کو انھوں نے بے حد سراہا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں