چائے کا شوق مہنگا پڑ گیا، بھارتی ٹرین کی کوچ میں آگ لگنے سے نو افراد ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

حکام نے بتایا ہے کہ ہفتے کے روز جنوبی بھارت میں کھڑی ہوئی ٹرین کی ایک کوچ میں آتش زدگی سے کم از کم نو افراد ہلاک ہو گئے۔ آگ اس وقت لگی جب ایک مسافر چائے بنانے کی کوشش کر رہا تھا۔

ٹرین سے الگ یہ کوچ جنوبی ریاست تامل ناڈو کے مدورائی ریلوے یارڈ میں کھڑی تھی کہ صبح سے پہلے آگ بھڑک اٹھی۔

مدورائی ضلع کے ترجمان سالی تھلاپتھی نے اے ایف پی کو بتایا، "یہ ایک واحد اور الگ کردہ کوچ تھی جسے ایک نجی ٹورسٹ آپریٹر نے بک کیا تھا۔ کسی نے چائے بنانے کی کوشش کی اور آگ لگ گئی۔ نو افراد کی موت واقع ہو چکی ہے جن میں تین خواتین شامل ہیں۔ دیگر نو افراد زخمی ہیں لیکن ان کے زخم مہلک نہیں ہیں۔"

انہوں نے مزید کہا کہ ابھی تک کسی بھی لاش کی شناخت نہیں ہو سکی ہے۔ فوٹیج میں ریل گاڑی کی کھڑکیوں سے آگ کے بلند شعلے نکلتے ہوئے نظر آ رہے تھے۔ کچھ مسافر بروقت آگ سے بچ نکلنے میں کامیاب ہو گئے۔

مقامی میڈیا رپورٹس میں کہا گیا ہے کہ مسافروں نے ایک گیس سلنڈر ممنوعہ طور پر کوچ میں رکھ لیا تھا جو پھٹ گیا جب انہوں نے اسے استعمال کرنے کی کوشش کی۔

بھارت کے پاس دنیا کے سب سے بڑے ریل نیٹ ورکس میں سے ایک ہے اور یہ کئی سالوں میں کئی تباہ کن آفات دیکھ چکا ہے۔ سب سے زیادہ تباہی 1981 کے ایک حادثے میں ہوئی جب ریاست بہار میں پل کو عبور کرتے ہوئے ایک ٹرین پٹری سے اتر گئی اور نیچے دریا میں جا گری جس سے 800 افراد ہلاک ہو گئے تھے۔ جون میں اوڈیشہ ریاست میں تین ٹرینوں کے تصادم میں تقریباً 300 افراد ہلاک ہوئے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں