لیبیا کی وزیر خارجہ کے ٹھکانے کے بارے میں متضاد اطلاعات

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائیلی وزیر خارجہ سے ملاقات کے بعد سے غائب لیبیا کی معطل وزیر خارجہ نجلاء المنقوش کے ٹھکانے کے بارے میں اب بھی متضاد اطلاعات ہیں۔

ذرائع ابلاغ نے انکشاف کیا تھا کہ وہ استنبول اور پھر لندن گئی ہیں، تاہم دوسری جانب ایئرپورٹ حکام نے انہیں سفر کی اجازت دینے کی تردید کی ہے۔

اسرائیلی وزارت خارجہ کی طرف سے روم میں لیبیا کے وزیر خارجہ کے ساتھ وزیر خارجہ ایلی کوہن کی ملاقات کی تفصیلات منظر عام پر آنے کے بعد ہنگاموں کے بعد، نیویارک ٹائمز نے پیر کے روز اطلاع دی کہ نجلاء المنقوش ترکی فرار ہو گئی ہیں۔

تفصیلات منظر عام پر آنے کے بعد وزیراعظم عبدالحمید الدبیبہ نے وزیرخارجہ کو کام کرنے سے روک دیا تھا اور تحقیقات کا حکم دیا تھا۔

ترکی سے لندن

نیویارک ٹائمز نے وزیرخارجہ کے ایک مشیر کے واٹس ایپ پیغام کا حوالہ دیا جس میں بتایا گیا کہ وہ اپنی حفاظت کے خوف سے ترکی بھاگ گئی ہیں۔

لیبیا کے ذرائع ابلاغ پر بتایا گیا ہے کہ وزیر خارجہ ترکی سے لندن کے لیے روانہ ہو گئی ہیں۔


وزیر کی برطرفی

لیبیا کے وزیراعظم الدبیبہ نے گذشتہ رات اعلان کیا تھا کہ وزیر خارجہ کو عارضی طور پر معطل کر دیا ہے، اور اس معاملے کی تحقیقات شروع کر دی ہیں، جب کہ میڈیا نے ایک حکومتی ذریعے کے حوالے سے بتایا ہے کہ وزیر کو برطرف کر دیا گیا ہے۔

ایک غیر رسمی ملاقات

لیبیا کی متحدہ حکومت کی وزارت خارجہ نے کل شام تصدیق کی کہ نجلاءالمنقوش کی گذشتہ ہفتے روم میں طالوی وزیر خارجہ کے ساتھ ملاقات کے دوران اسرائیلی وزیر کے ساتھ ایک غیر رسمی، غیر تجویز کردہ ملاقات ہوئی تھی۔"

بیان میں اس بات کی تصدیق کی گئی کہ ملاقات میں "کوئی بات چیت، معاہدے یا مشاورت شامل نہیں تھی، اور وزیر نے واضح اور غیر مبہم انداز میں مسئلہ فلسطین کے حوالے سے لیبیا کے مستقل مزاجی کی تصدیق کی۔"

وزیرخارجہ نے سرکاری چینل استعمال نہیں کیا

لیبیا کی داخلی سلامتی ایجنسی نے المنقوش کو سفر کی اجازت دینے یا سہولت فراہم کرنے کے حوالے سے گردش کرنے والی باتوں کی تردید کی، اور کہا کہ وہ ہوائی اڈے پر پروٹوکول کے مطابق سرکاری چینلز سے نہیں گزریں۔

ایجنسی کے مطابق جب تک کہ تحقیقات مکمل نہیں ہوتیں، وزیر پر سفری پابندیاں عائد رہیں گی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں