ایران کے ساتھ تعلقات کو مضبوط بنانے کی اہمیت پر زور دیتے ہیں: سعودی سفیر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

ایران میں سعودی سفیر نے اچھی ہمسائیگی کی بنیاد پر مملکت اور ایران کے درمیان تعلقات کو مضبوط بنانے رابطے اور ملاقاتوں کو تیز کرنے اور انہیں وسیع تر افق کی طرف لے جانے کی اہمیت پر زور دیا۔

سفیر عبداللہ بن سعود العنیزی نے منگل کے روز ایران کے دارالحکومت تہران پہنچنے پر کہا کہ" سعودی قیادت کی ہدایات میں مملکت اور ایران کے درمیان تعلقات کو مضبوط بنانے اور رابطے اور ملاقاتوں کو تیز کرنے اور انہیں وسیع تر افق کی طرف لے جانے کی اہمیت پر زور دیا گیا ہے۔''

انہوں نے کہا کہ ''ایران ہمسایہ ملک ہے اور اس کے پاس بہت سے اقتصادی اجزاء، قدرتی وسائل اور فوائد ہیں جو ترقی اور خوشحالی کے پہلوؤں کو بڑھانے میں معاون ہیں۔''

انہوں نے کہا کہ خطے میں استحکام اور سلامتی دونوں ممالک اور دو برادر عوام کے مشترکہ فائدے کے لیے ہے۔

سعودی پریس ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق، انہوں نے اس بات پر بھی زور دیا کہ ولی عہد اور وزیر اعظم شہزادہ محمد بن سلمان کی طرف سے شروع کیا گیا مملکت کا ویژن 2030، ایک روڈ میپ کی نمائندگی کرتا ہے جو تعاون کے ان تمام پہلوؤں کی عکاسی کرتا ہے جن پر دونوں ممالک کے درمیان تعاون کو بڑھایا جا سکتا ہے۔

یہ ایک اسٹریٹجک نقطہ نظر کے مطابق جو اچھی ہمسائیگی، افہام و تفہیم، تعمیری، بامقصد بات چیت اور احترام کے اصولوں کو قائم کرتا ہے اور دونوں ممالک کے درمیان باہمی اعتماد کو بڑھاتا ہے۔

ایرانی سفیر علی رضا عنایتی سعودی عرب میں بطور ایرانی سفیر اپنی ذمہ داریاں سنبھالنے کی تیاری میں ریاض پہنچ گئے۔

العربیہ کے ذرائع نے ایرانی سفیر کے ساتھ ایک سفارتی ٹیم کی آمد کی تصدیق کی ہے جو ایرانی ناظم الامور سے ڈیوٹی وصول کرے گی، جنہوں نے گذشتہ جون میں سعودی عرب میں ایرانی سفارت خانے کے افتتاح کے بعد سے چارج سنبھال لیا ہے۔

تعلقات کی دوبارہ بحالی

قابل ذکر ہے کہ سعودی عرب اور ایران نے گذشتہ مارچ کی دس تاریخ کو بیجنگ میں دونوں ممالک کے درمیان 2016 سے منقطع سفارتی تعلقات دوبارہ شروع کرنے اور اپنے سفارتی مشن دوبارہ کھولنے پر اتفاق کیا تھا۔

گذشتہ جون میں سعودی وزیر خارجہ شہزادہ فیصل بن فرحان سرکاری دورے پر تہران گئے تھے جس کے دوران انہوں نے ایرانی صدر ابراہیم رئیسی سے ملاقات کی، اور اس وقت اس بات کی تصدیق کی تھی کہ تہران نے سفارتی مشنوں کی واپسی کے لیے سہولیات فراہم کی تھیں۔

انہوں نے اس وقت اس بات پر بھی زور دیا کہ "دونوں فریقوں کے درمیان تعلقات باہمی احترام اور اندرونی معاملات میں عدم مداخلت کی ضرورت پر مبنی ہیں۔"

مقبول خبریں اہم خبریں