شام میں اسرائیل کا ایک روز میں دوسرا فضائی حملہ، متعدد افراد ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

اسرائیل نے بدھ کے روز چند گھنٹوں کے اندر دوسری بار شامی علاقوں کو نشانہ بنایا۔ حما کے دیہی علاقوں میں دھماکے ہوئے جن میں متعدد افراد ہلاک اور زخمی ہوئے ہیں۔ دوسری بار کیےگئے حملے میں اسرائیلی طیاروں نے جبل تفسیس میں ایک سائنسی تحقیقی مرکز کو نشانہ بنایا۔

شام کی وزارت دفاع نے بدھ کے روز کہا کہ اسرائیل نے شام کے صوبے حما میں ایک عمارت پر فضائی حملہ کیا۔ تاہم اس حملے سے صرف مادی نقصان ہوا ہے۔

سیریئن آبزرویٹری فار ہیومن رائٹس نے بتایا کہ اسرائیل نے طرطوس کے دیہی علاقوں کو نشانہ بنایا۔ حملے میں لبنانی "حزب اللہ" سے تعلق رکھنے والے ٹرکوں کو نشانہ بنایا گیا جو منگل کی شام لبنان کے ساتھ غیر قانونی گزرگاہوں سے شام میں داخل ہوئے تھے۔ یہ ٹرک شامی "فضائی دفاع" کے اندر گوداموں تک پہنچے۔ یہ اڈے طرطوس کے قریب الجاسمہ اور دیر الحجر قصبوں کے درمیان واقع ہے۔

سیریئن آبزرویٹری فار ہیومن رائٹس نے اسرائیلی حملوں کے نتیجے میں 3 فوجیوں کی ہلاکت کی تصدیق کی جن میں 2 شامی ہیں جب کہ تیسرے جنگجو کی شناخت نہیں ہوسکی ہے۔

قبل ازیں 10 کلومیٹر دور کارتو گاؤں میں فضائی دفاع کے اڈے کو نشانہ بنانے کے نتیجے میں پانچ فضائی دفاعی افسران سمیت آٹھ دیگر زخمی ہوگئے تھے۔

قابل ذکر ہے کہ نیا ہدف 2023 کے آغاز سے لے کر اب تک شامی علاقے کو نشانہ بنانے کا 28 واں حملہ ہے۔

2023 کے آغازسے اب تک سیریئن آبزرویٹری فار ہیومن رائٹس نے 28 واقعات کی تفصیلات جاری کی ہیں۔ ان میں سے 21 فضائی اور 7 زمینی تھے۔ان حملوں کے نتیجے میں تقریباً 66 اہداف کو نقصان پہنچا اور تباہ کیا گیا جن میں اسلحہ اور گولہ بارود کے ڈپو، ہیڈکوارٹر، مراکز، گاڑیاں شامل ہیں۔

ان حملوں کے نتیجے میں 64 فوجی ہلاک اور 77 دیگر زخمی ہوئے۔

مقبول خبریں اہم خبریں