روس کا ہمارے دو سفارتکاروں کو بے دخل کرنا بلا جواز ہے: امریکہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

امریکہ نے کہا ہے کہ روس کا ہمارے دو سفارتکاروں کو بے دخل کرنا بلا جواز ہے۔

روس نے اعلان کیا کہ دو امریکی سفارتکاروں کو بے دخل کیا جارہا ہے کیونکہ وہ ایک سابق روسی ملازم کے لیے رابطہ ایجنٹ تھے۔ ان دونوں کو اس سال کے آغاز میں گرفتار کیا گیا تھا۔ ان پر یوکرین کے تنازعے کے متعلق معلومات امریکہ کو منتقل کرنے کا شبہ تھا۔ روسی اعلان کے بعد امریکہ نے اس اقدام کو ناجائز قرار دیا ہے۔

امریکی محکمہ خارجہ نے کہا کہ روس کی طرف سے ہمارے دو سفارتی ملازمین کو نکالنا بلاجواز ہے۔ روس میں امریکی سفارت خانے کے ایک ذریعے نے بھی TASS کو خصوصی بیانات میں اعلان کیا کہ واشنگٹن روس کو امریکی سفارت کاروں کی بے دخلی کا جواب دے گا۔

ذرائع کے مطابق واشنگٹن ان الزامات کو مکمل طور پر مسترد کرتا ہے جن کی بنیاد پر ماسکو میں امریکی سفارت خانے کے دو ملازمین کو غیر معمولی شخصیت قرار دیا گیا تھا۔

یہ بات اس وقت سامنے آئی جب روسی وزارت خارجہ نے آج کے اوائل میں اس بات کی تصدیق کی کہ جن دو سفارت کاروں کو "پرسونا نان گریٹا" سمجھا جاتا ہے وہ ماسکو میں امریکی سفارت خانے کے پہلے اور دوسرے سیکرٹری جیفری سیلن اور ڈیوڈ برنسٹین تھے۔

فرانسیسی خبر رساں ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق انہوں نے مزید کہا کہ انہیں سات دنوں کے اندر روسی سرزمین سے نکل جانا چاہیے۔

انہوں نے وضاحت کی کہ دونوں سفارت کاروں نے رابرٹ چنوف نامی ایک روسی شہری سے رابطہ کرکے غیر قانونی سرگرمیاں کیں۔ اس پر کسی غیر ملک کے ساتھ خفیہ تعاون کا الزام ہے اور اسے روسی قومی سلامتی کو نقصان پہنچانے کے مقصد سے مالی انعامات کے بدلے مشن تفویض کیا گیا تھا۔۔

اسی ذریعے نے مزید کہا کہ ماسکو میں امریکی سفیر لین ٹریسی کو جمعرات کو روسی وزارت خارجہ میں طلب کر کے اس فیصلے سے آگاہ کیا گیا۔

روسی وزارت خارجہ کے مطابق امریکی سفارتی مشن کی طرف سے کی جانے والی غیر قانونی سرگرمیاں جس میں میزبان ملک کے اندرونی معاملات میں مداخلت بھی شامل ہے ناقابل قبول ہیں۔

یہ اخراج ایک ایسے وقت میں ہوا ہے جب روس اور امریکہ کے درمیان تعلقات اپنی نچلی سطح پر پہنچ چکے ہیں جو یوکرین کے سب سے بڑے مالی اور فوجی حامیوں میں سے ایک ہے، جہاں روس فروری 2022 سے حملہ کر رہا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں