امریکہ میں محبت کا معاملہ اور بچہ: چینی وزیر خارجہ کے خلاف تحقیقات جاری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

گذشتہ جولائی میں برطرفی کے بعد سے، چینی صدر شی جن پنگ کے قریبی ساتھی سمجھے جانے والے چین کے سابق وزیر خارجہ چن گینگ کی برطرفی کی وجوہات پر کئی اسرار نے گھیر رکھا ہے۔

حال ہی میں کچھ ذرائع نے ان کی برطرفی کی حوالے سے اصل وجوہات منظر عام پر لانے کا انکشاف کیا ہے۔

منگل کو وال سٹریٹ جرنل کے مطابق، اس معاملے سے واقف کچھ لوگوں نے بتایا کہ سینئر چینی حکام کو بتایا گیا کہ کمیونسٹ پارٹی کی اندرونی تحقیقات سے پتہ چلا ہے کہ سابق وزیر خارجہ غیر ازدواجی تعلقات میں ملوث تھے، جو واشنگٹن میں بیجنگ کے سفیر کے طور پر فرائض کے دوران جاری رہا۔

ذرائع نے انکشاف کیا کہ سینئر چینی حکام کو - بشمول وزراء اور صوبائی رہنماؤں کو گذشتہ ماہ چن کے بارے میں پارٹی کی تحقیقات کے بارے میں بریف کیا گیا تھا، جو جولائی 2021 سے اس سال جنوری تک امریکہ میں چینی سفیر کے طور پر خدمات انجام دے چکے ہیں۔

اس کے بعد انہیں بتایا گیا کہ ان کی برطرفی کی سرکاری وجہ "طرز زندگی کے مسائل" تھے، اندرونی ذرائع کے مطابق، عام طور پر یہ نرم اصطلاح پارٹی کے اندر جنسی بد سلوکی کے لیے استعمال ہوتی ہے۔


امریکہ میں ایک بچے کی پیدائش

اس کے علاوہ، دو افراد نے بتایا کہ حکام کو یہ بھی بتایا گیا تھا کہ چن ایک غیر ازدواجی تعلقات میں ملوث تھے جس کی وجہ سے امریکہ میں بچے کی پیدائش ہوئی۔

لیکن پارٹی عہدیداروں کو خاتون یا بچے کے نام ظاہر نہیں کیے گئے۔

چین کے سابق وزیر خارجہ چن گینگ (اے ایف پی)
چین کے سابق وزیر خارجہ چن گینگ (اے ایف پی)

تاہم، ذرائع نے تصدیق کی کہ تحقیقات ابھی بھی جاری ہیں، اور اب اس بات پر توجہ مرکوز کر رہے ہیں کہ آیا یہ کیس یا چن کی طرف سے کیا جانے والا کوئی اور برتاؤ چینی قومی سلامتی کو خطرے میں ڈالتا ہے۔

واضح رہے کہ ریاستی کونسل، چین کی کابینہ، اب بھی چن کو ریاستی کونسل کے پانچ اراکین میں سے ایک کے طور پر درج کرتی ہے، جنہیں "غیر معمولی" وزیر سمجھا جاتا ہے۔

قابل ذکر ہے کہ صرف 7 ماہ تک عہدے پر رہنے والے چن کی برطرفی ایک ایسے وقت میں ہوئی ہے جب چینی قیادت اپنے اور امریکہ اور اس کے اتحادیوں کے درمیان شدید مقابلے کے درمیان کسی بھی حفاظتی خلا کو ختم کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔

جبکہ ملکی معاملات سے واقف افراد نے تصدیق کی کہ پارٹی کے اعلیٰ عہدوں سے متعلق جانچ پڑتال ان عہدیداروں پر مرکوز ہے جو خاص طور پر غیر ملکیوں کے ساتھ معاملہ کرتے ہیں نیز مسلح افواج کی لڑنے کی صلاحیت کو یقینی بنانے کے ذمہ دار اعلیٰ فوجی افسران کو بھی سخت جانچ پڑتال کا سامنا ہے۔

ذرائع نے بتایا کہ کچھ بڑے معاشی چہروں اور ناموں کو بھی شامل کیا گیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ کچھ اقتصادی حکام، جنہیں روایتی طور پر اپنے مغربی ہم منصبوں اور غیر ملکی کاروباری منتظمین کے ساتھ بات چیت کرنے کے لیے زیادہ رعایت دی جاتی تھی، حال ہی میں اپنے آپ کو اپنے غیر ملکی معاملات کے بارے میں پہلے کی نسبت زیادہ تفصیل سے رپورٹ کرنے پر مجبور پاتے ہیں۔

تناؤ اور اضطراب

جبکہ بعض تجزیہ کاروں کا خیال تھا کہ حکومت اور حکمراں جماعت کی پردے کے پیچھے یہ ساری کشیدگی اور بدامنی اس بات کی طرف اشارہ کر سکتی ہے کہ چینی رہنما کا ملک پر کنٹرول نہیں ہے۔

چین میں حکمران جماعت کی کانفرنس سے (اے ایف پی)
چین میں حکمران جماعت کی کانفرنس سے (اے ایف پی)

اس تناظر میں واشنگٹن کے ایک تحقیقی مرکز سٹیمسن سنٹر میں چائنا پروگرام کے ڈائریکٹر یون سن کا خیال ہے کہ حکومت اور فوج میں اتنی اعلیٰ سطح پر بدامنی"یہ ایک ایسے وقت میں چین میں سیاسی عدم استحکام کی نشاندہی کر سکتی ہے جب معاشی سست روی کے درمیان اس وقت استحکام کو سب سے اہم عنصر سمجھا جاتا ہے۔"

قابل ذکر ہے کہ چن، جو کسی زمانے میں چینی صدر کے قابل اعتماد معاون سمجھے جاتے تھے، کو تقریباً ایک ماہ تک عوام کی نظروں سے غائب رہنے کے بعد، اس وقت واضح وضاحتوں کے بغیر گذشتہ جولائی میں برطرف کر دیا گیا تھا۔

وزارت خارجہ نے بعد میں اعلان کیا کہ 57 سالہ وزیر کی عدم موجودگی صحت کی وجوہات کی بناء پر تھی۔ اس سے پہلے کہ ان کی برطرفی کی خبر پھوٹتی!

اس کے علاوہ چند روز قبل وزیر دفاع لی چانگفو کی غیر موجودگی کے حوالے سے بھی کئی سوالات اٹھائے گئے تھے، جو کئی ہفتوں سے روپوش ہیں، اطلاعات ہیں کہ انہیں بدعنوانی کے الزامات کی وجہ سے جلد ہی برطرف کیا جا سکتا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں