پائیدار ترقی کے اہداف کے لئے کمزور ملکوں کو وسائل فراہم کئے جائیں: پاکستانی وزیراعظم

نگران وزیر اعظم نے یو این جنرل اسمبلی اجلاس کے موقع پر عالمی ترقیاتی تعاون پر ہونے والے اجلاس میں شرکت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

اقوام متحدہ کے زیر اہتمام پائیدار ترقیاتی اہداف سے متعلق مباحثے سے خطاب کرتے ہوئے پاکستان کے نگران وزیر اعظم انوارالحق کاکڑ نے کہا ہے ’’کہ پائیدار ترقی اہداف حصول کے لئے کمزور ملکوں کو وسائل فراہم کرنے ہوں گے۔ اس مقصد کے لیے 500 ارب ڈالر کے سی ایس ڈی آرز کو قرض کی ادائیگی سے مشروط کیا جاسکتا ہے۔‘‘

نگران وزیر اعظم انوار الحق کاکڑ نے یو این جنرل اسمبلی اجلاس کے موقع پرعالمی ترقیاتی تعاون پر ہونے والے اجلاس میں شرکت کرتے ہوئے گلوبل ڈویلپمنٹ انیشئیٹو کیلئے پاکستان کے بھرپور تعاون کےعزم کا اعادہ کیا۔

نگران وزیر اعظم نے کہا کہ گلوبل ڈویلپمنٹ انیشئیٹو پرعمل درآمد سنگ میل ہے، چین کا بیلٹ اینڈ روڈ اقدام اور سی پیک پائیدار ترقیاتی اہداف کے حصول میں اہم ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ غذائی پیداوار، بنیادی ڈھانچے، سرمایہ کاری، صنعت کاری اور صحت کے شعبوں میں اقدامات کرنا ہوں گے۔

ریئسی ۔ کاکڑ ملاقات

دورے کے موقع پر نگران وزیر اعظم انوار الحق کاکڑ اور ایرانی صدر ابراہیم رئیسی کے درمیان اقوام متحدہ (یو این) جنرل اسمبلی اجلاس کی سائیڈ لائنز پر ملاقات ہوئی، ملاقات میں دونوں رہنماؤں نے دو طرفہ تعلقات اور باہمی دلچسپی کے امور پر تبادلہ خیال کیا۔

اس موقع پر نگران وزیر اعظم انوار الحق کاکڑ نے کہا کہ پاکستان ایران سے قریبی دوستانہ تعلقات کو مزید وسعت دینا چاہتا ہے، ایران کے ساتھ اقتصادی تعاون کا فروغ چاہتے ہیں۔

فوٹو بہ شکریہ پی آئی ڈی
فوٹو بہ شکریہ پی آئی ڈی

انہوں نے کہا کہ پاک ایران مند سرحد پر بارڈر مارکیٹ کا افتتاح مثبت پیش رفت ہے، مند بارڈر مارکیٹ جیسے اقدامات سرحدی علاقوں کی اقتصادی ترقی میں معاون ہوں گے۔ ان کا کہنا تھا کہ پاکستان اور ایران کو اپنے جغرافیائی محل وقوع کا فائدہ اٹھانا چاہیے۔

نگراں وزیر اعظم انوار الحق کاکڑ نے نیو یارک میں امریکی صدر جو بائیڈن کے عشائیے میں بھی شرکت کی۔

امریکی صدر کی جانب سے دنیا بھر سے آئے سربراہانِ مملکت کے اعزاز میں عشائیہ دیا گیا جس میں وزیر اعظم اوران کی اہلیہ کو شرکت کی دعوت دی گئی تھی۔ اس عشائیہ میں صرف سربراہان مملکت، خواتین اول یا مرد اول کو دعوت دی گئی تھی۔

خیال رہے کہ نگران وزیر اعظم اس وقت اقوام متحدہ کے جنرل اسمبلی اجلاس میں شرکت کےلئے امریکا میں موجود ہیں جہاں وہ مختلف اجلاسوں میں شرکت کے علاوہ عالمی رہنماؤں سے بھی ملاقاتیں کریں گے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں