بائیکاٹ کرنے والی ہسپانوی خواتین فٹ بال کھلاڑی نیشنز لیگ کھیلنے پر رضامند

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ہسپانوی خواتین کی قومی فٹ بال ٹیم کی کھلاڑیوں کی بڑی تعداد نے پہلے بائیکاٹ کیا تھا تاہم طویل بات چیت کے بعد ان کھلاڑیوں کو آئندہ یورپی نیشنز لیگ میں شرکت کے لیے قائل کر لیا گیا ہے۔
سپین کی سپریم سپورٹس کونسل کے سربراہ وکٹر فرانکوس نے کہا کہ قومی ٹیم کے 23 میں سے 21 کھلاڑیوں نے کھیلنے پر رضامندی ظاہر کر دی ہے جبکہ باقی دو کھلاڑی کیمپ چھوڑنا چاہتی ہیں۔ اس حوالے سے ان پر کوئی پابندی نہیں لگائی جائے گی۔
ہسپانوی قومی ٹیم جمعہ کو سویڈش ٹیم سے کھیلے گی۔ پھر اگلا مقابلہ منگل کو سوئس قومی ٹیم سے ہوگا۔
سپین کی قومی ٹیم کے کھلاڑیوں نے قومی ٹیم کے ساتھ 2023 کا ورلڈ کپ جیتنے والے گینی ہرموسو کی حمایت میں بائیکاٹ کا اعلان کیا تھا۔
ہسپانوی فیڈریشن کے صدر لوئس روبیئلز نے 2023 کے ورلڈ کپ کے فائنل میچ کے بعد تقریب میں ہرموسو کے منہ پر بوسہ دے دیا تھا۔ اس کے بعد سپین میں غم و غصہ پھیل گیا تھا۔ فٹ بال کھلاڑی ہرموسو متعدد مرتبہ واضح کر چکی ہیں بوسہ رضامندی سے نہیں تھا۔
اس واقعہ کے بعد ورلڈ کپ جیتنے والی ٹیم کے تمام کھلاڑیوں سمیت کئی کھلاڑیوں نے اعلان کیا تھا کہ جب تک روبیلز فیڈریشن کے صدر کے عہدے پر ہیں وہ قومی ٹیم کے لیے نہیں کھیلیں گے۔ روبیلز نے چند روز قبل اپنے عہدے سے استعفیٰ دے دیا ہے۔
خواتین کھلاڑیوں، کھیلوں کی سپریم کونسل اور ہسپانوی فیڈریشن کے درمیان مذاکرات کے بعد فرانکوس نے اعلان کیا کہ فیڈریشن خواتین قومی ٹیم کی کھلاڑیوں کی جانب سے طویل مدتی تبدیلیوں کا مطالبہ کرے گی۔ اس مقصد کے لیے ایک مشترکہ کمیٹی تشکیل دی جائے گی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں