’امریکی انٹیلی جنس نے کینیڈا کو سکھ رہ نماء کے قتل میں بھارت کے ملوث ہونے کی اطلاع دی

’نیویارک ٹائمز‘ کی رپورٹ کے مطابق کینیڈا نے سکھ رہ نما ہردیپ سنگھ نجر کے قتل میں ہندوستان کے ملوث ہونے کو ثابت کرنے والی کالوں کی نگرانی کی تھی۔

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

امریکی اخبار "نیو یارک ٹائمز" امریکی میڈیا رپورٹس میں انکشاف کیا گیا ہے کہ امریکی انٹیلی جنس ایجنسیوں نے سکھ علیحدگی پسند رہ نما کے قتل کے بعد کینیڈا کو معلومات فراہم کیں جو کہ اس قتل میں بھارت کے ملوث ہونے کی نشاندہی کرتی ہیں۔

لیکن کینیڈا نے مزید مخصوص انٹیلی جنس معلومات تیار کیں جس کی وجہ سے اس نے بھارت پر سازش کے ماسٹر مائنڈ کا الزام لگایا۔

قتل کے تناظر میں امریکی انٹیلی جنس ایجنسیوں نے اپنے کینیڈین ہم منصبوں کو وہ سیاق و سباق فراہم کیا جس سے کینیڈا کو یہ نتیجہ اخذ کرنے میں مدد ملی کہ بھارت اس میں ملوث ہے۔ کینیڈین حکام کا کہنا تھا کہ اوٹاوا نے وہ ایسی معلومات اکٹھی کی تھیں جواس کیس میں "دلیل قاطع " ثابت ہوئیں۔ اس کے بعد کینیڈا میں ہندوستانی سفارت کاروں کی بات چیت کو روکا گیا جو اس سازش میں ان کے ملوث ہونے کی نشاندہی کرتا ہے۔

امریکی وزیر خارجہ انٹونی بلینکن نے بھارت سے کینیڈا کی تحقیقات میں تعاون کرنے کا مطالبہ کیا کہ امریکی حکام نے بڑی حد تک بھارت کی طرف سے کسی سفارتی ردعمل سے بچنے کی کوشش کی۔

لیکن اپنے کینیڈین ہم منصبوں کی مدد کے لیے امریکی انٹیلی جنس کی مداخلت کا انکشاف ایک ایسے وقت میں واشنگٹن کو کینیڈا اور بھارت کے درمیان سفارتی جنگ میں دھکیلنے کا خطرہ ہے جب وہ ایک قابل اعتماد پارٹنر کے طور پر نئی دہلی کے ساتھ تعلقات استوار کرنے کا خواہاں ہے۔

ہردیب سنگھ نجر
ہردیب سنگھ نجر

عہدیداروں نے نیویارک ٹائمز کو بتایا کہ امریکا کو اس سازش کے بارے میں یا اس میں ہندوستان کے ملوث ہونے کی نشاندہی کرنے والے شواہد کے بارے میں علم نہیں ہوا، جب تک کہ "بھارتی ایجنٹوں" نے سکھ رہ نما ہردیپ سنگھ نجر کو قتل نہیں کیا۔

18 جون کو وینکوور کے علاقے میں دو افراد نے بھارتی نژاد کینیڈین شہری نجر کو گولی مار کر ہلاک کر دیا جو ہندوستان میں سکھ اکثریتی علاقے کی آزادی کا دفاع کر رہا تھا۔

قتل سے پہلے کینیڈین حکام نے نجر کو بتایا تھا کہ وہ خطرے میں ہیں۔ نجر کے کئی دوستوں اور ساتھیوں نے بتایا کہ اسے اپنے خلاف دھمکیوں کے بارے میں بار بار متنبہ کیا گیا تھا اور اسے تنبیہ کی گئی تھی کہ وہ وینکوور میں سکھ گردوارے میں جانے سے گریز کریں۔

اس کی موت کے بعد امریکی حکام نے اپنے کینیڈین ہم منصبوں کو بتایا کہ واشنگٹن کو اس سازش کے بارے میں کوئی پیشگی اطلاع نہیں تھی۔ اگر امریکی حکام کو ایسی معلومات ہوتیں تو وہ انٹیلی جنس ایجنسیوں کے "خبردار کرنے کی ذمہ داری" کے نظریے کے تحت فوری طور پر اوٹاوا کو مطلع کر دیتے۔

نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بات کرنے والے اہلکاروں نے بتایا کہ کینیڈین حکام نے ہردیپ سنگھ نجر کو عام انتباہ دیا، لیکن یہ نہیں بتایا کہ وہ بھارتی حکومت کی سازش کا نشانہ بن سکتے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں