کینیڈا:وزیرخارجہ کا اسپیکرپارلیمان سے نازی فوجی کی تعریف کرنے پرمستعفی ہونے کا مطالبہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

کینیڈا کی وزیر خارجہ میلانیا جولی نے پارلیمان میں ایک سابق نازی فوجی کی کھلے عام تعریف کرنے پر ایوان زیریں دارالعوام کے اسپیکر سے مستعفی ہونے کا مطالبہ کردیا ہے۔

اسپیکر انتھونی روٹا نے پیر کے روز ایوان میں معافی مانگی تھی لیکن انھوں نے استعفا دینے کے بڑھتے ہوئے مطالبے کی مخالفت کی تھی۔ گذشتہ جمعہ کو یوکرین کے صدر ولودی میر زیلنسکی کے دورے کے موقع پر روٹا نے ایک سابق فوجی کو جنگی ہیرو قرار دیا تھا اور ایوان میں ارکان نے اس فوجی کے لیے کھڑے ہوکر تالیاں پیٹی تھیں۔

لیکن جلد ہی یہ بات سامنے آئی کہ 98 سالہ سابق فوجی یاروسلاف ہونکا دوسری جنگ عظیم کے دوران میں جرمن مرد آہن ایڈولف ہٹلر کے وافین ایس ایس یونٹوں میں سے ایک میں خدمات انجام دے چکے تھے۔ روس نے اس واقعہ کو شرمناک قرار دیا ہے۔

جولی نے منگل کے روز کابینہ کے اجلاس سے قبل صحافیوں کو بتایا کہ یہ دارالعوام اور کینیڈا کے عوام کے لیے شرمندگی کا باعث تھا اور میرے خیال میں اسپیکر کو ایوان کے ارکان کی بات سننا چاہیے اور مستعفی ہوجانا چاہیے۔ وہ لبرل کابینہ کی پہلی رکن ہیں جنھوں نے روٹا سے استعفے کا مطالبہ کیا ہے۔

ایوان میں چار بڑی سیاسی جماعتوں کے سینیر عہدے دار اس معاملے پر تبادلہ خیال کے لیے آج منگل کو ملاقات کرنے والے تھے۔ اگر روٹا استعفا دینے سے انکار کرتے ہیں تو قانون ساز ان کے خلاف عدم اعتماد کی باضابطہ تحریک پیش کر سکتے ہیں۔

وزیر اعظم جسٹن ٹروڈو نے کابینہ کے اجلاس سے قبل صحافیوں کو بتایا کہ یہ اچھی بات ہے کہ اسپیکر روٹا نے ذاتی طور پر معافی مانگی ہے اور مجھے یقین ہے کہ وہ اب اس بات پر غور کر رہے ہیں کہ ایوان کے وقار کو کیسے یقینی بنایا جائے۔

کینیڈا کی پارلیمان کے اسپیکر انتھونی روٹا
کینیڈا کی پارلیمان کے اسپیکر انتھونی روٹا

نازی فوجی کی تعریف سے زیلنسکی کے دورے کو بھی سبوتاژ کرنے میں مدد ملی۔انھوں نے فروری 2022 میں روس کے حملے کے بعد سے مہیّا کی جانے والی اربوں ڈالر کی امداد اور ہتھیاروں پر کینیڈا کا شکریہ ادا کیا۔

یہ واقعہ روسی صدر ولادی میر پوتین کے اس بیانیے کو بھی تقویت دینے کا سبب بنا ہے جس میں انھوں نے کہا تھا کہ انھوں نے گذشتہ سال یوکرین میں اپنی فوج پڑوسی ملک کو "غیر فوجی اور غیرنازی‘‘ بنانے کے لیے بھیجی تھی۔اس دعوے کو کِیف اور مغربی اتحادیوں نے بے بنیاد قرار دے کر مسترد کردیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں