فرانس میں لگژری برانڈ پیاژے سے زیورات کی چوری میں ملوّث پانچ ملزمان گرفتار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

فرانس میں پولیس نے پیرس میں واقع لگژری برانڈ پیاژے کے اسٹور میں دن دہاڑے مسلح ڈکیتی کے الزام میں ایک تجربہ کار زیورات چور سمیت پانچ افراد کو گرفتار کیا ہے۔

پولیس کے تخمینے کے مطابق یکم اگست کو ڈکیتی کی واردات میں گینگ نے ایک سے ڈیڑھ کروڑ یورو (10.5 سے 15.8 ملین ڈالر) مالیت کے زیورات اور گھڑیاں چوری کی تھیں۔

استغاثہ نے اس وقت کہا تھا کہ سہ پہر کے وقت ہونے والی ڈکیتی کی اس واردات میں تین افراد براہ راست ملوث تھے، دو افراد سوٹ میں ملبوس تھے اور ایک خاتون نے لباس پہنا ہوا تھا۔ ان میں سے ایک شخص مسلح تھا۔تاہم اس دوران میں کسی کو چوٹ نہیں آئی تھی۔

یہ اسٹور فرانسیسی دارالحکومت کے وسط میں روئے ڈی لا پیکس پر واقع ہے، جو مشہور مقام وینڈوم کے قریب ہے اور یہاں اعلیٰ درجے کے زیورات کی کئی ایک دکانیں ہیں۔پولیس نے منگل اور بدھ کو پانچوں مشتبہ افراد کو گرفتار کیا ہے۔

ان میں ایک عادی ڈکیت 66 سالہ عیسیٰ بن جابر بھی شامل ہے۔اس شخص کو 2016 میں لگژری سامان کے ایک اور مشہور اسٹور چوپرڈ میں ڈکیتی کے جرم میں 12 سال قید کی سزا سنائی گئی تھی لیکن فیصلے کے وقت مشروط رہائی کے بعد وہ عدالت میں پیش ہونے میں ناکام رہے تھا۔

بن جابرپر شبہ ہے کہ وہ لاکھوں یورو مالیت کی چوری کی متعدد وارداتوں میں ملوّث رہا ہے۔ وہ "بورسالینو مین" کے نام سے بھی جانا جاتا ہے کیونکہ وہ اکثر ٹوپی پہنے ہوتا ہے۔ واضح رہے کہ پیرس کے وسط میں واقع پلیس وینڈوم کے آس پاس کے علاقے کو اکثر چوری اور ڈکیتی کی وارداتوں میں نشانہ بنایا جاتا ہے۔

اپریل میں موٹر سائیکلوں پر سوار تین افراد نے اسی محلے میں بلگری اسٹور کو لوٹ لیا اور کئی لاکھ یورو مالیت کے زیورات لوٹ کر فرار ہوگئے تھے۔

سوئٹزرلینڈ میں قائم پیاژے برانڈ مہنگے زیورات اور لگژری گھڑیاں بناتا ہے۔ان کی قیمت کئی ہزار یورو تک ہو سکتی ہے۔یہ ریخمونٹ گروپ کا ماتحت ادارہ ہے ، جو کارٹیئر ، باؤم اور مرسیئر ، کلوئی ، اور وان کلیف اور آرپلس سمیت لگژری سامان کی متعدد دیگر کمپنیوں کا بھی مالک ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں